Wednesday , August 23 2017
Home / اضلاع کی خبریں / اوٹنور میں فرقہ وارانہ فساد‘ حالات کشیدہ

اوٹنور میں فرقہ وارانہ فساد‘ حالات کشیدہ

واٹس اپ گروپ میں وائرل مسیج کو لیکر ہندو تنظیموں کا تشدد ‘ مسلمانوں کا زبردست نقصان

OO    دونوں فرقوں کے علاوہ ایس پی و ڈی ایس پی بھی زخمی
OO     حالات پر قابو پانے ڈی آئی جی کوشاں

ؒؒ       اوٹنور۔ 7۔ مئی(سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) ضلع عادل آباد کے مستقر اوٹنور میں سوشل میڈیا واٹس اپ گروپ میں ایک وائرل مسیج کو لیکر دونوں فرقوں میں زبردست تشدد کا ماحول برپا ہوگیا۔ موصولہ تفصیلات کے مطابق اوٹنور منڈل کے موضع گنگاپور کے رہنے والے محمد حکیم نے واٹس اپ گروپ میں آئے ایک مسلمانوں کے خلاف بد کلامی کے ایک ویڈیوکے جواب میں آڈیو ریکارڈ بھیجا جس کے وائرل ہوتے ہی ہندو واہنی و وی ایچ پی و دیگر ہندو مذہبی تنظیموں قائدین و کارکنوں نے کل نصف شب کے وقت منصوبہ بند طریقہ سے مسلمانوں کے تقریبا 16دُکانات کے تالے توڑے اور زبردست نقصان پہنچایا۔اطلاع ملتے ہی ضلع کے اقلیتی قائدین نے ریاستی اقلیتی قائدین کو اوٹنور میں پیش آئے واقعہ کی تفصیلات بتائی۔  مسلم قائدین نے فوری طور پر آئی جی حیدر آباد سے فون پر بات کرتے ہوئے اوٹنور کے حالات بتائے جس پر انھوں نے تیقن دیا کہ وہ ڈی آئی جی ، کمشنر اور ایس پی کو ہدایت دینگے کہ فوری حالات پر قابو پایا جائے۔ لیکن پولیس کی تاخیر کی وجہ سے مسلمانوں کا کافی نقصان ہوا۔ رات اُسی وقت سے پولیس نے 144سکشن بھی نافذ کردیا  اسکے باوجود بھی دوسرے دن صبح قدیم بس اسٹانڈ کے قریب جہاں پولیس اسٹیشن بھی قریب میں ہے دونوں فرقوں میں زبردست جھڑپ ہوئی ‘پتھرائو کیا گیا۔ پھر پولیس نے مداخلت کرتے ہوئے دونوں فرقوں کے نوجوانوں کو قابو میں لانے کے لئے آنسو گیس کا استعمال بھی کیا۔ اس جھڑپ میں دونوں فرقوں کے علاوہ ضلع ایس پی سرینواس کے ہاتھ پر چوٹ لگی، ڈی ایس پی لکشمی نارائنہ کے پیر پر چوٹ لگی زخمی ہوئے۔ اور وہ پولیس نے ظہر کی نماز بھی مسلمانوں کو اپنے اپنے گھروں میں ادا کرنے کو کہا ۔مستقر اوٹنور کی تمام مساجد پر پولیس کے جوانوں کو متعین کیا گیا۔ ایک موصولہ اطلاع کے بموجب کل رات کے واقعہ کے بعد ہندو واہنی و وی یچ پی تنظیم کے کارکنان میں اطراف و اکناف کے علاقوں سے آئے ہوئے افراد کی تعداد زیادہ تھی۔ حالات پھر بھی بے قابو ہے۔ ڈی آئی جی کریم نگر رینج روی کمار، ضلع کلکٹر بدھا پرکاش، ایس پی ایم سرینواس،نے پولیس اسٹیشن میں پریس کانفرنس میں کہا کہ واٹس اپ میں شرانگیز آڈیو اپلوڈ کرنے والے شخص، فارورڈ کرنے والے شخص پر  ،پتھرائو اور مسلمانوں کی دُکانات کو نقصان پہنچانے والے اشخاص  کے علاوہ پولیس کو زخمی کرنے والے اشخاص پر کیس درج کیا گیا۔ وائرل آڈیو مسیج واٹس اپ گروپ میں بھیجنے والا محمد حکیم مفرور بتایا جا رہا ہے۔ ڈی آئی جی روی کمار اوٹنور میں حالات پر قابو پانے کے لئے پڑائو ڈالے ہوئے ہیں۔ انھوں نے پریس میٹ میں کہا کہ دو گھنٹوں کی مہلت دی گئی ہے دو گھنٹوں بعد امن کمیٹی اجلاس طلب کیا جائے گا جس میں دونوں فرقوں کے قائدین سے بات چیت کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT