Thursday , April 27 2017
Home / سیاسیات / اُتر پردیش میں چوتھے مرحلہ کی پولنگ کیلئے مہم کا اختتام

اُتر پردیش میں چوتھے مرحلہ کی پولنگ کیلئے مہم کا اختتام

۔12 اضلاع میں پھیلے  53اسمبلی حلقوں میں کل ووٹنگ، پسماندہ بندیل کھنڈ علاقہ کا بھی احاطہ، سونیاگاندھی کے حلقہ رائے بریلی کے حلقوں میں بھی پولنگ ہوگی

لکھنؤ۔/21فبروری، ( سیاست ڈاٹ کام ) زبردست انتخابی مہم جس میں تلخ شخصی حملے بھی دیکھنے میں آئے، اُترپردیش کے 12 اضلاع میں پھیلے ہوئے53 اسمبلی حلقوں میں آج شام اختتام پذیر ہوئی، جہاں چوتھے مرحلہ میں جمعرات کو ووٹ ڈالے جائیں گے۔وزیر اعظم نریندر مودی، چیف منسٹر اکھلیش یادو اور بی ایس پی سربراہ مایاوتی اُن متعدد قائدین میں شامل ہیں جو پسماندہ اور پانی کی قلت سے دوچار بندیل کھنڈ خطہ کی طرف مصروف دیکھے گئے، جو پولنگ کے چوتھے مرحلہ میں شامل ہے۔ صدر کانگریس سونیا گاندھی کا لوک سبھا حلقہ رائے بریلی کے تحت اسمبلی حلقے بھی اس مرحلہ میں شامل رہیں گے۔ چوتھے مرحلے میں رائے دہی والے دیگر اضلاع پرتاپ گڑھ، کوشمبی، الہ آباد، جلایوں، جھانسی، للت پور، مہوبہ، باندہ، حامرپور، چترکوٹ اور فتح پور ہیں۔ نہایت شدت سے چلائی گئی انتخابی مہم کے دوران مودی نے بار بار ایس۔ کانگریس اتحاد کو نشانہ بنایا

اور بی ایس پی پر بھی اس کی حکمرانی میں کرپشن کے موضوع پر تنقید کی۔ مودی نے جب بندیل کھنڈ کے ووٹروں سے اپیل کی تو یہ انداز اختیار کیا کہ اسکام کی علامت ایس پی، کانگریس، اکھلیش اور مایاوتی سے چھٹکارا حاصل کرلیں۔ جب وزیر اعظم نے بی ایس پی کو بہن جی سمپتی پارٹی سے تعبیر کیا تو مایاوتی نے ترکی بہ ترکی جواب میں کہا کہ نریندر دامودرداس مودی کے ابتدائی حروف ’’ مسٹر نگیٹیو دلت مین‘‘ کا مطلب ظاہر کرتے ہیں جس کے ساتھ جیسے کو تیسی تنقید والا معاملہ ہوا اور سیاسی ماحول گرما گیا۔ نائب صدر کانگریس راہول گاندھی اور ایس پی سربراہ اکھلیش یادو نے آج الہ آباد میں روڈ شو منعقد کیا جبکہ صدر بی جے پی امیت شاہ نے بھی مہم کے آخری روز سنگم نگری (الہ آباد ) میں متوازی روڈ شو منعقد کیا۔ لفظی جنگ کے ماحول میں اکھلیش نے گجرات کے محکمہ سیاحت کے ایک اشتہار کا حوالہ دیا جہاں مودی وزارت عظمیٰ سنبھالنے سے قبل چیف منسٹر تھے۔ انہوں نے نام لئے بغیر میگا اسٹار امیتابھ بچن کو مشورہ دیا کہ گجرات کے گدھوں کیلئے تشہیر ی مہم نہ چلائیں۔

یو پی میں آر ایل ڈی کا اہم موقف ہوگا
لکھنؤ۔/21فبروری(سیاست ڈاٹ کام)راشٹریہ لوک دَل(آرایل ڈی)نے تیسرے مرحلے تک ہوئے اسمبلی انتخابات میں کم از کم 40سیٹوں پر جیت کا دعویٰ کرتے ہوئے آج کہا کہ اتر پردیش میں بننے والی حکومت میں آرایل ڈی کا اہم کردار ہوگا۔آر ایل ڈی کے سینئر رہنما اور سابق وزیر چودھری صاحب سنگھ نے آج یہاں نامہ نگاروں سے کہا کہ ریاستی اسمبلی کے انتخابات میں واضح اکثریت کسی پارٹی کو نہیں ملے گی، ایسے میں آر ایل ڈی کی مدد کے بغیر حکومت نہیں بنے گی۔آرایل ڈی کسانوں کے تئیں ہمدردی رکھنے والی پارٹی کو ہی حمایت دے گی۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم اور ریاست کے وزیراعلی تقریروں سے ہی عوام کا پیٹ بھرنے میں ماہر ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT