Wednesday , August 23 2017
Home / ہندوستان / آلور میں پہلو خان کی موت پر راجستھان اسمبلی کا اجلاس ملتوی

آلور میں پہلو خان کی موت پر راجستھان اسمبلی کا اجلاس ملتوی

جئے پور 24 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) آج راجستھان اسمبلی کے اجلاس میں پہلو خان کی مبینہ طور پر ریاست کے ضلع آلور میں گائے کے اسمگلرس کی جانب سے ہلاک کردیئے جانے کے سلسلہ میں زبردست شوروغل ہوا۔ جس کے نتیجہ میں راجستھان اسمبلی کا اجلاس ملتوی کرنے پر مجبور ہونا پڑا۔ وقفہ صفر کے دوران اپوزیشن کانگریس نے نظم و قانون کا مسئلہ اُٹھایا جس میں کانگریس کے ڈپٹی وہپ گوئند سنگھ ڈوتسارا نے حکومت سے اظہار تشویش کیاکہ مبینہ ایک نابالغ لڑکی کی کل سکر میں عصمت ریزی کے سلسلہ میں تھی۔ الزامات کے نتیجہ میں ایوان میں شوروغل مچ گیا۔ بی جے پی اور اپوزیشن کانگریس دونوں پارٹیوں کے ارکان نے ہنگامہ مچایا اور ایک دوسرے پر الزام تراشی کی۔ ریاستی وزیرداخلہ گلاب چند کٹاریا نے کہاکہ حکومت اِس معاملہ میں بروقت کارروائی کرنے کی پابند ہے اور ملزمین کے خلاف قانون تعزیرات ہند کی دفعہ 308 قابل تعزیر قتل کی کوشش، درج کی گئی ہے۔ جبکہ قانون تعزیرات ہند کی دفعہ 323 (ضرر پہنچانا) کے تحت ایف آئی آر واقع کے پہلے دن درج کیا گیا تھا۔ ڈپٹی اسپیکر راؤ راجندر سنگھ نے کانگریس ارکان سے خواہش کی کہ اُنھیں تیقن دیا جاتا ہے کہ حکومت اِس کارروائی کے ذمہ داروں کے خلاف سخت کارروائی کرے گی لیکن کانگریس ارکان مطمئن نہیں ہوئے اور ایوان کے وسط میں جمع ہوگئے۔ شوروغل جاری رہنے پر ڈپٹی اسپیکر نے ایوان کا اجلاس ایک گھنٹے کے لئے ملتوی کردیا۔ پہلو خان اور دیگر چار پر مبینہ طور پر آلوار کے قصبہ بہرور میں گاؤ رکھشکوں نے حملہ کیا تھا جبکہ وہ راجستھان کے علاقہ رام گڑھ سے یکم اپریل کو مویشی خرید کر ہریانہ جارہے تھے۔ 55 سالہ پہلو خان 3 اپریل کو اسپتال میں زخموں سے جانبر نہ ہوسکا۔ مقامی پولیس نے مبینہ اسمگلنگ اور ہلاکت کے سلسلہ میں کئی افراد کو گرفتار کرلیا ہے۔ پہلو خان کے والد نے ادعا کیا ہے کہ جو مویشی راجستھان سے خریدے گئے تھے اُن میں سے ایک بھی گائے نہیں تھی۔ گاؤ رکھشکوں کی زدوکوب غیر ضروری اور غیر قانونی تھی۔

TOPPOPULARRECENT