Tuesday , September 26 2017
Home / سیاسیات / اکھلیش کا کیاش لیس سوسائٹی نظریہ پر اعتراض

اکھلیش کا کیاش لیس سوسائٹی نظریہ پر اعتراض

سابق وزیراعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ کو نوٹوں کی تنسیخ کی تنقید کا حق نہیں:بی جے پی
لکھنو۔4ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی کے ’’کیاش لیس سوسائٹی ‘‘ نظریہ پر اعتراض کرتے ہوئے چیف منسٹر اترپردیش اکھلیش یادو نے آج کہاکہ مرکز نے کوئی اقدام دیہی آبادی سے اس تصور پر مشورہ کے بعد نہیں کیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ’’ انہوں( مودی) نے ڈیجیٹل انڈیا کیلئے کیا تیاریاں کی ہیں ؟ ۔ انہیں کیاش لیس سودے بازی کون سکھائے گا ؟ ۔ دیگر افراد کے بارے میں کیا اقدام کیا جارہا ہے ؟ ۔ ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیف منسٹر یو پی اکھلیش یادو نے یہ سوالات وزیراعظم مودی سے کئے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے دیہاتوں کو لیاپ ٹاپس سربراہ کئے اور آپ ( وزیراعظم) کو چاہیئے کہ ہم تمام کو بتانا چاہیئے کہ آپ نے کیا کیا  ؟ ۔ آپ کو جان لینا چاہیئے کہ حکومت جو عوام کو تکلیف دیتی ہے باقی نہیں رہتی ۔ انہوں نے ان کی حکومت کی کارکردگی کا مرکزی حکومت کی کارکردگی سے تقابل کرتے ہوئے کہا کہ انہیں یو پی حکومت کے ساتھ ترقی کے سلسلہ میں زبردست کام کرنے کا مقابلہ کرنا چاہیئے جو ریاستی حکومت نے گذشتہ چار سال کے دوران کیا ہے ۔ مرکز کی بی جے پی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے اکھلیش یادو نے کہا کہ بی جے پی کی یاترائیں نوٹوں کی تنسیخ کی وجہ سے ناکام ہوچکی ہیں ۔ عوام کو قطاروں میں کھڑا رہنا پڑرہا ہے جس کی وجہ سے یہ اسکیم ناکام ہوگئی ہے ۔ بنگلورو سے موصولہ اطلاع کے بموجب  بی جے پی نے آج سابق وزیراعظم منموہن سنگھ کی ساکھ پر شبہ ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ انہیں اعلیٰ مالیتی کرنسی نوٹوں کی تنسیخ پر تنقید کرنے کا کوئی حق حاصل نہیں ہے ۔ کیونکہ وہ ایک بدعنوان حکومت کے سربراہ رہ چکے ہیں ۔ سابق حکومت اتنی بدعنوان تھی کہ ماضی میں اس کی کوئی مثال نہیں ملتی ۔

TOPPOPULARRECENT