Wednesday , September 20 2017
Home / ہندوستان / اکھلیش یوپی کے چیف منسٹر ہوں گے ، ملائم کا اعلان

اکھلیش یوپی کے چیف منسٹر ہوں گے ، ملائم کا اعلان

لکھنو ۔9 جنوری ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) پارٹی میں اختلافات کے تسلسل کے دوران سماج وادی پارٹی سربراہ ملائم سنگھ یادو نے آج رات اپنے باغی بیٹے اکھلیش یادو کو شاخِ زیتون پیش کرتے ہوئے کہا کہ اکھلیش یادو اُن کی پارٹی برسراقتدار آنے کی صورت میں یوپی کے آئندہ چیف منسٹر ہوں گے۔ ملائم سنگھ یادو نے ایک ایسے وقت یہ بیان دیا ہے جب کہ سماج وادی پارٹی اکھلیش کیمپ نے پارٹی کے انتخابی نشان کے بارے میں عاجلانہ فیصلہ کی الیکشن کمیشن سے گذارش کی ہے ، جبکہ انتخابی نشان کے سلسلے میں اس گروپ کا ملائم سنگھ گروپ سے تنازعہ برقرار ہے ۔ الیکشن کمیشن نے گروہ واری تنازعہ پہنچنے سے پہلے دونوں فریقین نے مندوبین اور منتخبہ نمائندوں کی اکثریت کی تائید کا ادعا کیا تھا ۔ ملائم سنگھ نے اپنے فرزند اکھلیش کو پارٹی کا چیف منسٹری کا امیدوار قرار دینے سے انکار کیا تھا اور کہا تھا کہ نئے ارکان اسمبلی اپنے قائد کا انتخاب کریں گے ۔ انھوں نے کہا تھاکہ ہم جلد ہی پوری یوپی کا دورہ کریں گے تاکہ اتحاد کا پیغام پہونچا سکیں ۔ اکھلیش یادو کو آئندہ چیف منسٹر قرار دیکر ملائم سنگھ یادو نے اختلافات کا خاتمہ کردیا ہے ، حالانکہ ملائم سنگھ کیمپ نے کوئی تازہ دستاویزات پیش نہیں کی ہیں ، تاہم اُن کا بیان ہے کہ وہ اب بھی سماج وادی پارٹی کے صدر ہیںاور پارٹی اور اُس کے انتخابی نشان پر اُن کا قانونی ادعا برقرار ہے ۔ ملائم سنگھ نے الیکشن کمیشن سے کہا تھا کہ یکم جنوری کو اکھلیش کیمپ کا طلب کردہ کنونشن غیردستوری تھا کیونکہ رام گوپال یادو جنھوں نے یہ اجلاس طلب کیا تھا 30 ڈسمبر 2016 ء کو پارٹی سے خارج کردیئے گئے ہیں۔ ملائم سنگھ نے پارٹی قائدین کے اُن حلف ناموں پر بھی اعتراض کیا تھا جو پارٹی کے گروپ نے اپنی وفاداری چیف منسٹر یوپی اور اُن کے فرزند کے ساتھ ہونے کا ادعا کرتا تھا پیش کی تھیں۔ انھوں نے الزام عائد کیا تھا کہ یہ دستاویزات جعلی ہیںاور الیکشن کمیشن سے ان کی جانچ کی خواہش کی تھی ۔ ملائم سنگھ نے صدرنشین راجیہ سبھا سے بھی گذارش کی تھی کہ رام گوپال یادو کو راجیہ سبھا میں سماج وادی پارٹی کا قائد تسلیم نہ کیا جائے ، کیونکہ پارٹی سے اُن کا اخراج عمل میں آچکا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT