Friday , July 21 2017
Home / سیاسیات / اکھیلیش یادو نے یو پی اسمبلی میں چچا شیوپال کو نظر انداز کیا

اکھیلیش یادو نے یو پی اسمبلی میں چچا شیوپال کو نظر انداز کیا

بازو کی نشست پر بیٹھنے کے باوجود رسمی ملاقات و مصافحہ سے گریز ‘ اختلافات ایوان میں بھی عیاں
لکھنو 15 مئی ( سیاست ڈاٹ کام ) اترپردیش کے یادو خاندان میں کشیدہ تعلقات آج اس وقت پھر آشکار ہوگئے جب سماجوادی پارٹی لیڈر اکھیلیش سنگھ یادو نے اترپردیش اسمبلی میں اپنے چچا شیوپال یادو کو نظر انداز کردیا ۔ شیوپال یادو اسمبلی کے رکن ہیں اور ایوان آنے کے بعد وہ سماجوادی پارٹی کے دوسرے ارکان کے ساتھ آخری قطار میں جا بیٹھے ۔ اکھیلیش یادو جوکہ قانون ساز کونسل کے رکن ہیں وہ دونوں ایوانوں سے گورنر کے مشترکہ خطاب کے دوران پہلی صف میں بیٹھے رہے ۔ شیوپال کو دیکھنے کے بعد سماجوادی پارٹی کے کچھ ارکان انہیں سامنے لے آئے اور اکھیلیش کی نشست کے بازو میں انہیں نشست فراہم کردی ۔ تاہم شیوپال کو دیکھنے کے بعد بھی اکھیلیش نے ان سے مصافحہ نہیں کیا اور نہ ہی کسی طرح کی بات چیت کی ۔ جب سماجوادی پارٹی کے ایک رکن نے پارٹی کی سرخ ٹوپی پیش کی تو شیوپال نے اسے پہلن لیا اور جب گورنر کے خطبہ کے دوران اپوزیشن ارکان کی جانب سے نعرہ بازی کی جا رہی تھی شیوپال کھڑے رہے ۔ سماجوادی پارٹی میں اختلافات حال ہی میں اس وقت منظر عام پر آگئے تھے جب شیوپال یادو نے اعلان کیا تھا کہ وہ ایک سکیولر محاذ بنا رہے ہیں اور ان کے بھائی ملائم سنگھ یادو اس کی قیادت کرینگے ۔ حالیہ یو پی اسمبلی انتخابات میں شیوپال یادو نے جسونت نگر کی اپنی نشست سے کامیابی حاصل کی تھی اور حال ہی میں انہوں نے انتباہ دیا تھا کہ اگر اکھیلیش یادو نے سماجوادی پارٹی کی عنان اقتدار اگر اپنے والد ملائم سنگھ یادو کو اندرون تین ماہ حوالے نہیںکی تو سکیولر محاذ قائم کردیا جائے گا ۔ یو پی اسمبلی انتخابات سے قبل بھی اکھیلیش اور ان کے چچا شیوپال کے مابین سخت اختلافات دیکھنے میں آئے تھے ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT