Monday , August 21 2017
Home / پاکستان / ایدھی کیخلاف پروپگنڈہ، عطیات میں کمی کے اندیشے

ایدھی کیخلاف پروپگنڈہ، عطیات میں کمی کے اندیشے

کراچی ۔ 13 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) پاکستان کے عالمی شہرت یافتہ سماجی جہدکار و مخیر شخص عبدالستار ایدھی مرحوم کے فرزند فیصل ایدھی نے کہا ہیکہ بعض دقیانوسی قدامت پسند عناصر کی جانب سے ان کے والد کی شبیہہ کو مسخ کرتے ہوئے  ان کے خلاف منفی پروپگنڈہ مہم چلارہے ہیں جس سے ایدھی فاؤنڈیشن کو ملنے والے عطیات میں کمی کا اندیشہ ہے۔ فیصل ایدھی نے اردو کے ایک عالمی نشریاتی ادارہ کو دیئے گئے انٹرویو میں کہا کہ ایدھی فاؤنڈیشن کے خلاف ہر سال سرگرم مہم چلائی جاتی رہی ہے جس سے اس فاؤنڈیشن کو دیئے جانے والے عطیات میں کمی کے اندیشے پیدا ہورہے ہیں۔ فیصل نے کہا کہ محض ان کے والد عبدالستار ایدھی کی شخصیت کے سبب کئی افراد اس فاؤنڈیشن کو عطیات دیا کرتے تھے اور رمضان کے دوران ہی ان کی وفات کی افواہیں چلائی گئی تھیں۔ بعض عناصر نے عوام کو اس ادارہ کیلئے عطیات دینے سے باز رکھنے کیلئے بڑے پیمانے پر پروپگنڈہ مہم چلائی۔ اس سوال پر کہ آیا یہ افواہیں کون پھیلا رہے ہیں۔ فیصل نے جواب دیا کہ ’’پسماندہ ذہنیت کے حامل رجعت پسند عناصر اور انتہاء پسند نظریات کے رکھنے والے افراد اس کے ذمہ دار ہیں۔

ملاؤں اور سرمایہ داروں نے ایدھی کو ہمیشہ تکلیف دی۔ فیصل نے کہا کہ ’’ملاؤں نے نماز جمعہ کے خطبوں میں عبدالستار ایدھی کو کبھی احمدی، تو کبھی آغا خانی اور کبھی کافر قرار دیتے ہوئے عوام کو اس فاؤنڈیشن کو عطیات دینے سے باز رکھنے کی کوشش کی تھی‘‘۔ فیصل نے کہا کہ وہ اس منفی پروپگنڈہ کے اسباب و عوامل کو نہیں سمجھ سکے ہیں کیونکہ اس فاؤنڈیشن کو مساجد اور دینی مدرسوں کے مقابلے بہت کم عطیات موصول ہوا کرتے ہیں۔ فیصل نے کہا کہ ’’اب میں دوسروں سے صرف یہی استدعا اور درخواست کرتا ہوں کہ انہیں معاف کردیں اور چھوڑ دیں۔ وہ اب مر چکے ہیں۔ چنانچہ اب ان کے خلاف فتوے جاری کرنے کی کوئی وجہ باقی نہیں رہی‘‘۔ ایدھی مرحوم کے بیٹے نے کہا کہ ’’عبدالستار ایدھی سوشلسٹ نظریات کے حامل شخص تھے اور مجھے بھی ان ہی نظریات اور اصولوں کے مطابق پروان چڑھایا اور ہم ان ہی کے اصولوں کے مطابق فاؤنڈیشن کو آگے بڑھائیں گے حتیٰ کہ ہمیں اگر فٹ پاتھوں پر یہ فاؤنڈیشن چلانا پڑے تو ہم اس کیلئے تیار ہیں‘‘۔

TOPPOPULARRECENT