Wednesday , October 18 2017
Home / شہر کی خبریں / این او سی جاری کرنے میں حکومت تلنگانہ کی تاخیر کے باعث عادل آباد میں ایرپورٹ کی تعمیر میں تاخیر

این او سی جاری کرنے میں حکومت تلنگانہ کی تاخیر کے باعث عادل آباد میں ایرپورٹ کی تعمیر میں تاخیر

حیدرآباد ۔ 9 ۔ جنوری : ( ایجنسیز ) : حکومت تلنگانہ کی جانب سے وزارت دفاع کو نوآبجکشن سرٹیفیکٹ ( این او سی ) جاری کرنے میں تاخیر کے باعث عادل آباد میں مجوزہ ایر فیلڈ کے قیام میں تاخیر ہورہی ہے ۔ اس کا انکشاف ، کے ارون کمار کی جانب سے قانون حق معلومات سے استفادہ کرتے ہوئے پوچھے گئے ایک سوال کے ذریعہ ہوا ۔ ارون کمار کے مطابق انہوں نے اس ایر فیلڈ کی تعمیر میں تاخیر سے متعلق پوچھتے ہوئے ڈائرکٹر آف پرسنل سروسیس ایر ہیڈ کوارٹرس نئی دہلی کے پاس آر ٹی آئی سوال داخل کیا جس کے جواب میں وزارت دفاع نے بتایا کہ اس پراجکٹ کو اس لیے شروع نہیں کیا گیا کیوں کہ اس کے لیے ریاستی حکومت کے این او سی کا انتظار ہے ۔ ارون کمار نے کہا کہ اس کے اطراف و اکناف کے دیہاتی فکر مند ہوگئے ہیں کیوں کہ اس پراجکٹ کیلئے حصول اراضی کے حصہ کے طور پر کاشت کی قابل اراضیات کا عہدیداروں کی جانب سے سروے کئے جانے کے بعد زمین کی قیمت بہت کم ہوگئی ہے ۔ اس دوران ذرائع نے کہا کہ ریاستی حکومت نے کتہ گوڑم میں ایک گرین فیلڈ ایرپورٹ کے لیے اجازت دے چکی ہے جب کہ عادل آباد میں ایر فیلڈ کے لیے این او سی جاری کرنے میں تاخیر ہوئی ہے ۔ نظام آباد سے مربوط ذرائع کے مطابق اس ایر فیلڈ کا قیام سابق نظام حکومت میں اس کے آخری حکمران میر عثمان علی خاں کے دور میں عمل میں آیا تھا ۔ اس ایر فیلڈ سے دوسری عالمی جنگ کے دوران ایک ایر فلنگ اسٹیشن کے طور پر کام کیا گیا تھا ۔ مرکزی حکومتوں نے متحدہ آندھرا پردیش میں اس مقام پر ایک پائیلٹ ٹریننگ کیمپ قائم کرنے کی تجاویز رکھی تھی ۔ لیکن ریاستی حکومت نے اس میں دلچسپی نہیں دکھائی جس کی وجہ یہ تجویز برفدان کی نذر ہوگئی ۔ ریاست تلنگانہ کے قیام کے بعد اس ایر فیلڈ کی اس ضلع میں پھر سے اہمیت ہوگئی کیوں کہ ایر فورس کے عہدیداروں نے 2014 میں یہاں ایک ایر فورس ٹریننگ سنٹر قائم کرنے کے لیے سروے کیا تھا ۔ ضلع نظم و نسق نے اس پراجکٹ کے لیے عادل آباد منڈل میں انوکنٹہ ، کچکنٹی ، تھنٹال اور خانہ پور ولیجس کے اطراف میں 1502 ایکڑ اراضی کی نشاندہی کی ہے ۔ جس میں 366 ایکڑ اراضی دستیاب ہے ۔ اس وقت کے کلکٹر نے بھی ایر فورس اتھارٹیز کو بھی مکتوب ارسال کیا تھا کہ اس علاقہ میں خاطر خواہ آبی برقی سربراہی اور روڈ اینڈ ٹرین کنیکٹیویٹی اور دیگر انفراسٹرکچر سہولتیں ہیں ۔ اس لیے ایک ایر فیلڈ قائم کرنے کے لیے یہ ایک اچھا مقام ہے ۔ یہ ایر پورٹ ناگپور تا حیدرآباد قومی شاہراہ 44 پر انڈسٹریل کاریڈر کے لیے بھی فائدہ مند ثابت ہوگا ۔۔

TOPPOPULARRECENT