Thursday , October 19 2017
Home / Top Stories / ایکویڈر زلزلہ: 272 ہلاک، ملبہ میں تلاش جاری

ایکویڈر زلزلہ: 272 ہلاک، ملبہ میں تلاش جاری

مانٹا ۔ 18 پریل (سیاست ڈاٹ کام) لاطینی امریکہ کے ملک ایکویڈر میں حکام کا کہنا ہے کہ ہفتہ کو زلزلے میں ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد 272 تک پہنچ گئی ہے جبکہ ڈیڑھ ہزار سے زیادہ افراد زخمی ہوئے ہیں۔ ریخترپیما پر اس زلزلے کی شدت 7.8 ریکارڈ کی گئی تھی اور اسے ایکویڈر کی حالیہ تاریخ کا بدترین زلزلہ قرار دیا جا رہا ہے۔ ملک کے صدر رافیئل کوریا نے کہا ہے کہ اس وقت ترجیح ملبے تلے دبے زندہ افراد کی تلاش ہے تاہم انھوں نے خبردار کیا ہے کہ ہلاک شدگان کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ پیر کو ٹی وی پر قوم سے خطاب میں ان کا کہنا تھا کہ ’مجھے خدشہ ہے کہ مرنے والوں کی تعداد بڑھ سکتی ہے کیونکہ ملبہ ہٹانے کا عمل جاری ہے۔‘ انھوں نے یہ بھی کہا کہ ملبے میں زندگی کے آثار بھی ملے ہیں اور یہ اس وقت ہماری ترجیح ہے۔‘ زلزلے سے بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی ہے اور سینکڑوں مکانات منہدم ہوئے ہیں جبکہ سڑکیں اور بجلی کا نظام تباہ ہوگیا ہے۔ متاثرہ علاقوں میں امدادی کارروائیاں جاری ہیں جن میں دس ہزار فوجی اور ساڑھے تین ہزار پولیس اہلکار بھی شریک ہیں۔ اس زلزلے سے ملک کے شمال مغربی ساحلی علاقے زیادہ متاثر ہوئے ہیں اور ایسے ہی ایک قصبے پیڈرنالس کے میئر کا کہنا ہے کہ وہاں منہدم ہونے والے ہوٹلوں کے ملبے میں سینکڑوں نعشیں موجود ہو سکتی ہیں۔ ایکواڈور کے صدر نے ملک میں ہنگامی حالت کے نفاذ کا اعلان کیا ہے اور وہ اٹلی کا دورہ مختصر کر کے وطن واپس آ گئے ہیں۔ اس زلزلے کا مرکز موزین شہر کے آس پاس کا علاقہ تھا جس سے نہ صرف 160 کلو میٹر دور دارالحکومت کیوٹو میں عمارتیں ہل گئیں بلکہ اس کے جھٹکے ہمسایہ ملک کولمبیا تک محسوس کیے گئے۔ ایکواڈور کے نائب صدر جارج گلیس نے کہا ہے کہ ’ہمیں اطلاعات ہیں کہ مختلف اضلاع میں ملبے کے نیچے کئی لوگ دبے ہوئے ہیں اور ہم انھیں نکالنے کی تیاریاں کررہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT