Tuesday , September 26 2017
Home / Top Stories / ایک لاکھ مدرسوں میں بیت الخلائیں تعمیر کرنے مرکز کا منصوبہ

ایک لاکھ مدرسوں میں بیت الخلائیں تعمیر کرنے مرکز کا منصوبہ

نئی دہلی ، 18 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) مرکز ملک بھر میں ایک لاکھ مدرسوں میں بیت الخلاء کی تعمیر کا منصوبہ رکھتا ہے جو حصول علم کے ان روایتی مراکز کو نئی جلا بخشنے کی کوششوں کا حصہ ہے۔ مرکزی مملکتی وزیر اقلیتی امور مختار عباس نقوی نے آج کہا کہ حکومت ان روایتی مدارس میں دوپہر کے کھانے کی اسکیم متعارف کرانے اور اساتذہ کی صلاحیتوں کو فروغ دینے کا منصوبہ بھی رکھتی ہے ۔ حکومت نے 3Ts فارمولا طے کیا ہے یعنی ٹیچرز، ٹفن اور ٹائلٹس۔ وہ انتیودیا بھون میں اپنے دفتر میں میڈیا سے بات کررہے تھے۔ اس سے قبل مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کی گورننگ باڈی اور جنرل باڈی کے میٹنگس منعقد ہوئے۔ یہ فاؤنڈیشن اُن کی وزارت کے تحت خودمختار غیرنفع بخش اقلیتی بہبود کا ادارہ ہے۔ نقوی نے کہا کہ ان اجلاسوں میں ہم نے فیصلہ کیا کہ مدارس جو اصل دھارے کی تعلیم فراہم کررہے ہیں یا وہ جو ایسا کرنا چاہتے ہیں، ہم اس طرح کے مدرسوں کی بڑے پیمانے پر مدد کریں گے۔ اور ہمارے پاس 3Ts یعنی ٹیچرز، ٹفنس اور ٹائلٹس کا فارمولا ہے۔ اور سوچھ بھارت مشن کے تحت ہم اگلے مالی سال کے ختم تک اس طرح کے ایک لاکھ مدرسوں میں بیت الخلائیں تعمیر کرنے کا نشانہ رکھتے ہیں۔ وزارت اقلیتی امور کے عہدیداروں نے کہا کہ یہ ٹائلٹس اس فاؤنڈیشن کے بہبودی اقدامات کے تحت تعمیر کئے جائیں گے۔

نقوی اس فاؤنڈیشن کے بلحاظ عہدہ صدر ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ٹفن کا مطلب مڈ ڈے میل اور تیسرا ’ٹی‘ ٹیچرز (اساتذہ وغیرہ) کیلئے ہے۔ ہم مدارس کی شناخت بھی کریں گے جہاں ہمیں ٹیچروں کی صلاحیتوں کو اُبھارنے یا انھیں تربیت دینے یا دیگر پروگراموں کے ذریعے فن تعلیم کو بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ مدرسوں میں مڈ ڈے میل کی فراہمی کا فیصلہ اس فاؤنڈیشن کی جنرل باڈی کی میٹنگ منعقدہ ڈسمبر میں یعنی پانچ ریاستوں کے اسمبلی انتخابات سے قبل کیا گیا تھا۔ نقوی نے مزید کہا: ’’ہم چند مدرسوں کو سائنس و ٹکنالوجی کی تعلیم کو شامل نصاب کرتے ہوئے عصری بنانے کا منصوبہ بھی رکھتے ہیں۔ فاؤنڈیشن کے بعض اراکین مختلف ریاستوں کا سفر کرتے ہوئے اس نمونہ سے جڑنے کے خواہشمند مدرسوں کا پتہ چلائیں گے۔‘‘ وزیر موصوف نے یہ بھی کہا کہ فاؤنڈیشن اپنی مختلف اسکیمات کے استفادہ کنندگان کی تعداد میں اضافہ کرنا چاہتا ہے، جیسے لڑکیوں کیلئے بیگم حضرت محل نیشنل اسکالرشپ اور غریب نواز اِسکل ڈیولپمنٹ سنٹرز۔

نئی یو پی حکومت نادار اقلیتوں کو ترقی دے گی، نقوی کا ادعا
دریں اثناء مرکزی وزیر مختار نقوی نے آج کہا کہ مرکزی اور ریاستی سطح کی اسکیمات جو اترپردیش میں لیت و لعل کا ’’شکار‘‘ ہیں، ان کا احیاء کیا جائے گا اور  ’’محروم اقلیتیں‘‘ ترقی دیکھیں گی۔ میڈیا سے بات چیت میں وزیر موصوف نے کہا کہ بی جے پی ’’بااختیار بناتی ہے، خوشامد نہیں کرتی‘‘۔ انھوں نے الزام عائد کیا کہ ریاستی اور مرکزی دونوں سطح کی سماجی۔ معاشی ترقیاتی اسکیمات پر عمل آوری نہیں ہورہی ہے۔ پی ایم کے 15 نکاتی پروگرام کو (اس ریاست میں) عملاً بند کردیا گیا، جو سڑکوں، ایجوکیشن انفراسٹرکچر اور نوکریاں فراہم کرتا ہے۔ ’’اب ہماری پارٹی کی وہاں تشکیل حکومت پر ہم سی ایم سے بات کریں گے اور ہمیں اعتماد ہے کہ پسماندہ اور اقلیتی برادریوں سے تعلق رکھنے والے لوگوں کو تعلیم، نوکریوں اور ہنرمندی کے فروغ کے ذریعے ترقی کی راہ پر گامزن کیا جائے گا۔‘‘

TOPPOPULARRECENT