Tuesday , August 22 2017
Home / اضلاع کی خبریں / اے ایس اآئی موہن ریڈی کے مقدمہ پر کئی ایک شک و شبہات

اے ایس اآئی موہن ریڈی کے مقدمہ پر کئی ایک شک و شبہات

کریم نگر۔/5ڈسمبر، ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) گزشتہ ماہ سے سنسنی پھیلانے والے ایس آئی موہن ریڈی کے غیر مجاز سودی کاروبار کے معاملے میں کئے گئے جبر ظلم و زیادتی غنڈہ گردی کے سلسلہ میں درج کردہ مقدمات کی تحقیقات اور عدالت میں پیش ہونے والے پولیس عہدیدار ان واقعات کی خبروں سے بھی واقف ہیں۔ قانون اور انصاف کیلئے وقف ہوجانے والی پولیس آج اپنے ہی محکمہ کے ملازمین کی کارکردگی سے عوام کی نظروں میں سوالیہ نشان بن چکی ہے اور اب شک و شبہات کے گھیرے میں آرہی ہے۔پچھلے چند دن سے پولیس موہن ریڈی کے درج کردہ مقدمات 27.2015-25-25/2015-2015/416 کی تحقیقات ہورہی ہیں۔ اسی دوران مزید 40سے زائد مقدمات مختلف پولیس اسٹیشنوں میں موہن ریڈی کے خلاف درج ہوچکے ہیں لیکن فی الحال تین مقدمات چل رہے ہیں۔ مابقی نظرانداز ہوچکے ہیں لیکن فی الحال 3 مقدمات پرمقدمہ چل رہا ہے۔ مابقی نظرانداز ہیں اس کے علاوہ اس مقدمہ سے متعلق ایسے افراد جنہوں نے اقبالیہ بیان دے چکے ہیں درج کروایا ہے ان پر بھی محکمہ جاتی کوئی کارروائی نہیں ہوئی۔ تبادلہ کردیئے جانے کے بعد ان پولیس عہدیداروں کو چپکے سے دوسرے مقدمات پر متعین کردیا گیا ہے۔ پہلے پہل موہن ریڈی کے معاملہ میں تیزی دکھلائی اور سنسنی پھیلادی اور اب آہستہ آہستہ لاپرواہی غفلت کا مظاہرہ کیا جارہا ہے جن پر صرف شبہ ہے انہیں مجرم بتاتے ہوئے اصل مجرمین سے انہیں اس مقدمہ سے غائب کیا جارہا ہے کہکر متاثرین کی تشکیل کردہ انجمن نے الزام عائد کیا کہ موہن ریڈی کے معاملہ میں پہلے ہی سے پرنٹ اینڈ الکٹرانک میڈیا کے خلاف محکمہ پولیس عہدیداروں نے اب بروز جمعہ مجرمین کو عدالت میں پیش کرتے وقت میڈیا کے نمائندوں کو عدالت کے احاطے میں داخل ہونے نہیں دیا۔ اس موقع پر مجرمین اور قیدیوں کے افراد خاندان کو بھی بات کرنے کی اجازت نہیں دی۔ اس وجہ سے موہن ریڈی کے ظلم کے شکار متاثرین میں شک و شبہات پیدا ہوگئے ہیں۔ اس لئے موہن ریڈی کے مقدمہ کو سی بی آئی کے حوالے کئے جانے کا مطالبہ کررہے ہیں۔ پہلے ہی سی آئی ڈی کی تحقیقات پر شک و شبہات کئے جارہے تھے اب اس میں مزید اضافہ ہوچکا ہے۔ 55تا ہزار کروڑ کے اس فینانس کاروبار میں زیادہ تر پولیس عہدیدار ملازمین بھی شامل ہیں۔ ہوم گارڈ سے لیکر اے اے ایس پی سطح تک پولیس ملوث ہے ظاہر ہوچکا ہے۔ اس غیر مجاز سودی کاروبار کے متاثرین کے ساتھ کانگریس، سی پی آئی، تلگودیشم کی جانب سے موہن ریڈی کے مقدمہ کی چھان بین و تحقیقات ہائی کورٹ کے برسر خدمت جج کے ذریعہ کروانے کا مطالبہ کیا جارہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT