Thursday , October 19 2017
Home / شہر کی خبریں / ا16 اضلاع کے کلکٹریٹ اور ایس پیز دفاتر کی کل سنگ بنیاد

ا16 اضلاع کے کلکٹریٹ اور ایس پیز دفاتر کی کل سنگ بنیاد

اضلاع کی تشکیل جدید کے ایک سال کی تکمیل پر حکومت کا اقدام ، دیگر دفاتر کے لیے بھی اراضی کی نشاندہی
حیدرآباد ۔ 9 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز ) : اضلاع کی تشکیل جدید کی 11 اکٹوبر کو ایک سال کی تکمیل کے پیش نظر 16 ضلع ہیڈ کوارٹرس پر اضلاع کلکٹریٹ اور ایس پیز آفسوں کی نئی عمارتوں کا 11 اکٹوبر کو سنگ بنیاد رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر تین اضلاع سدی پیٹ ، سرسلہ اور نرمل کی سنگ بنیاد تقریب میں حصہ لیں گے ۔ واضح رہے کہ گذشتہ سال 11 اکٹوبر کو چیف منسٹر نے 21 نئے اضلاع کی تنظیم جدید کی تھی ۔ نئے اضلاع میں کلکٹریٹ اور ایس پیز کے دفاتر کرائے کے عمارتوں یا عارضی عمارتوں میں خدمات انجام دے رہے ہیں ۔ حکومت نے 16 اضلاع میں نئے دفاتر کی تعمیر کیلئے اراضی کی نشاندہی کرتی ہے اور ایک ہی دن میں تمام دفاتر کے عمارتوں کی تعمیرات کیلئے سنگ بنیاد رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ اضلاع سدی پیٹ ، سرسلہ اور نرمل کی سنگ بنیاد تقریب میں حصہ لیں گے ماباقی اضلاع میں وزراء سنگ بنیاد تقریب میں شرکت کریں گے ۔ سدی پیٹ ، سرسلہ ، نرمل ، جنگاؤں ، ونپرتی ، جوگو لامبا گدوال ، ناگر کرنول ، کمرم بھیم آصف آباد ، منچریال ، پداپلی ، میڑچل ، رنگاریڈی ، وقار آباد ، جگتیال ، کاماریڈی ، جئے شنکر بھوپال پلی ، کے اضلاع میں 11 اکٹوبر کو کلکٹریٹ اور ایس پیز آفیسوں کے عمارتوں کا سنگ بنیاد رکھا جائے گا ۔ 12 اکٹوبر کو چیف منسٹر کے سی آر سوریہ پیٹ میں منعقد ہونے والی سنگ بنیاد تقریب میں شرکت کریں گے ۔ چیف منسٹر آج پیر کو ضلع سنگاریڈی کے نارائن کھیڑ کا دورہ کرنے والے تھے تاہم موسم سازگار نہ ہونے کی وجہ سے 13 اکٹوبر کو دورہ کریں گے ۔ ماباقی اضلاع میں سرکاری عمارتوں کی تعمیر کیلئے اراضی کا انتخاب کرنے کے بعد نئے عمارتوں کی تعمیرات کا آغاز کیا جائے گا ۔ اضلاع کی تنظیم جدید کے بعد کلکٹرس نے 70 فیصد دیہاتوں کا دورہ کرتے ہوئے عوامی مسائل کا جائزہ لیا ہے اور فلاحی اسکیمات کے ثمرات عوام تک پہونچ رہے ہیں یا نہیں اس کی بھی نگرانی کررہے ہیں ۔ اضلاع کی تنظیم جدید کے بعد نظم و نسق عوام کی دہلیز تک پہونچ گیا ہے ۔ کلکٹرس نے بیشتر دیہاتوں کا دورہ کرتے ہوئے عوامی مسائل پر غور و خوص کیا ہے اور سرکاری ملازمین کی کارکردگی پر بھی خصوصی توجہ دی جارہی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT