Tuesday , April 25 2017
Home / ہندوستان / بابری مسجد شہادت مقدمہ: اوما بھارتی کا استعفیٰ خارج از امکان : حکومت

بابری مسجد شہادت مقدمہ: اوما بھارتی کا استعفیٰ خارج از امکان : حکومت

حکم نامہ کے تفصیلی مطالعہ کا بی جے پی کا بیان ، خاطیوں کو سزا ملے گی:کانگریس ، این سی پی کا خیرمقدم
نئی دہلی۔ 19 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی وزیر ارون جیٹلی نے عملی اعتبار سے اوما بھارتی کے بابری مسجد شہادت مقدمہ میں سپریم کورٹ کے حکم نامہ کے پس منظر میں استعفیٰ کے امکان کو مسترد کردیا اور کہا کہ یہ ایک فرضی امکان ہے۔ برسراقتدار پارٹی کو صدارتی اور نائب صدارتی امیدوار کے انتخاب میں کوئی مشکل درپیش نہیں ہوگی۔ اس فیصلہ کا بی جے پی پر کوئی اثر نہیں ہوگا۔ مقدمہ 1993ء سے جاری ہے اور کوئی نئی صورتحال پیدا نہیں ہوئی، اس لئے موجودہ صورتحال برقرار رہے گی۔ ان سے سوال کیا گیا تھا کہ کیا سپریم کورٹ کے فیصلہ کا مطلب اوما بھارتی کا استعفیٰ ہوگا جو مرکزی وزیر برائے آبی وسائل، دریاؤں کے فروغ اور دریائے گنگا کے احیاء ہیں۔ اعلیٰ سطحی قائدین ایل کے اڈوانی، مرلی منوہر جوشی اور اوما بھارتی پر 1992ء میں بابری مسجد کی شہادت کے مقدمہ میں مجرمانہ سازش کیلئے مقدمہ چلایا جائے گا۔ سپریم کورٹ نے سی بی آئی کو اجازت دے دی ہے کہ ان کے خلاف فردِ جرم بحال کرے تاہم سپریم کورٹ نے گورنر راجستھان کلیان سنگھ کو جنہیں دستوری استثنیٰ حاصل ہے، اس وقت مقدمہ چلانے کی ہدایت دی

جبکہ وہ گورنر کے عہدہ سے علیحدہ ہوجائیں گے۔ وہ بابری مسجد کی شہادت کے وقت چیف منسٹر یوپی تھے۔ بی جے پی نے سپریم کورٹ کے فیصلہ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا تھا کہ کسی بھی ردعمل کے اظہار سے پہلے پارٹی عدالتی حکم نامہ کا تفصیلی مطالعہ کرنا ضروری سمجھتی ہے۔ سینئر لیڈر اور وزیر قانون روی شنکر پرساد نے تاہم کہا کہ ان کی پارٹی اپنے قائدین جیسے اڈوانی، جوشی کا انتہائی احترام کرتی ہے۔ اوما بھارتی اور دیگر قائدین پر سپریم کورٹ کے فیصلہ کے مطابق مقدمہ چلایا جائے گا۔ اہم اپوزیشن پارٹی کانگریس کے ترجمان اعلیٰ رندیپ سرجے والا نے پارٹی کا ابتدائی ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ سپریم کورٹ اپنی بات کہہ چکا ہے۔ قانون اپنا کام کرے گا۔ اسے کسی کا خوف نہیں ہے اور نہ وہ کسی کا جانبدار ہے۔ انصاف ہوگا اور خاطیوں کو سزا دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ملکی قانون بلالحاظ موقف ذات پات، رنگ و نسل اور مذہب و علاقہ سب کیلئے مساوی ہے۔ کانگریس قائد نے پارٹی ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ اڈوانی، جوشی اور اوما بھارتی پر مجرمانہ سازش کا مقدمہ بابری مسجد کی شہادت کے سلسلے میں چلانے کی اجازت دے چکی ہے۔

مندر تحریک کا حصہ ہونے پر اوما بھارتی کا اظہار فخر
سپریم کورٹ کے حکم نامہ پر کہ بابری مسجد کی شہادت کے سلسلے میں ان پر سازش کا مقدمہ چلایا جائے گا، مرکزی وزیر اوما بھارتی نے کہا کہ وہ ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کیلئے اپنی زندگی کی قربانی دینے کیلئے بھی تیار ہیں۔ ایودھیا میں ایک شاندار رام مندر کی تعمیر ان کا خواب ہے۔ وہ مندر کی تعمیر کیلئے جیل جانے یا پھانسی پر چڑھنے کیلئے بھی تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ آج رات ایودھیا جائیں گی ۔ عارضی مندر کا دورہ کریں گی اور رام لالا کا آشیرواد حاصل کریں گی۔ انہوں نے کہا کہ وہ فخر کرتی ہیں اور انہیں کوئی شرمندگی نہیں ہے کہ وہ رام جنم بھومی مہم میں اپنا کردار ادا کرچکی ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT