Friday , September 22 2017
Home / شہر کی خبریں / بارش سے تباہ سڑکوں کی تعمیرات، پانی ٹہرنے کے مقامات کی نشاندہی

بارش سے تباہ سڑکوں کی تعمیرات، پانی ٹہرنے کے مقامات کی نشاندہی

آئندہ کسی قسم کی خرابی سے محفوظ رکھنے کے اقدامات، وزیر بلدی نظم و نسق کا جائزہ اجلاس

حیدرآباد۔/16نومبر، ( سیاست نیوز) ریاستی وزیر بلدی نظم و نسق کے ٹی آر نے شہر حیدرآباد میں 4189 کروڑ روپئے کے مصارف سے کئے جانے والے سڑکوں کی تعمیرات و توسیع ، بس ریاپڈ ٹرانسپورٹ سسٹم، عوامی ٹرانسپورٹ کی سہولت اور جنکشن کی ترقی کے علاوہ دیگر اُمور کا جائزہ لیا۔ آج چنا ریڈی انسٹی ٹیوٹ میں مختلف محکمہ جات اور اداروں کے اعلیٰ عہدیداروں کا جائزہ اجلاس طلب کیا جس میں محکمہ بلدی نظم و نسق کے پرنسپال سکریٹری ایم جی گوپال ، میئر حیدرآباد بی رام موہن، ڈپٹی منیجنگ ڈائرکٹر دانا کشور، ایچ ایم ڈی اے کمشنر چرنجیولو، حیدرآباد میٹرو ٹرین کے منیجنگ ڈائرکٹر این وی ایس ریڈی کے علاوہ دوسرے عہدیدار موجود تھے۔ ریاستی وزیر بلدی نظم و نسق کے ٹی آر نے بتایا کہ حالیہ بارش سے گریٹر حیدرآباد میں سڑکوں کو بڑے پیمانے پر نقصان پہنچا ہے۔ 75کروڑ روپئے کے مصارف سے 489 سڑکوں کی تعمیر و مرمت کا آغاز کیا گیا، 176 سڑکوں کے تعمیراتی کام مکمل ہوئے مابقی سڑکوں کے تعمیری کاموں کو جلد از جلد مکمل کرنے تعمیری معیار پر کسی قسم کا سمجھوتہ نہ کرنے، ہمیشہ پانی ٹھہرنے کے مقامات کی نشاندہی کرنے، نشیبی علاقوں میں ناکارہ ہوئی سڑکوں کی تعمیرات کیلئے لائحہ عمل تیار کرنے کی عہدیداروں کو ہدایت دی۔ سڑکوں کی تعمیرات کیلئے لائحہ عمل تیار کرنے کی عہدیداروں کو ہدایت دی۔ سڑکوں کی تعمیرات میں عصری مشینوں کو استعمال کرنے کا مشورہ دیا۔ گریٹر حیدرآباد کے حدود میں 480 کلو میٹر وائیٹ ٹاپنگ روڈ تعمیر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس پر 1275 کروڑ روپئے خرچ کئے جائیں گے۔ کے ٹی آر نے پہلے مرحلہ میں ٹریفک کا زیادہ بہاؤ والے علاقوں میں وائیٹ ٹاپنگ سڑکوں کی تعمیر کرنے پر زور دیا۔ وزیر بلدی نظم و نسق نے ٹریفک کو باقاعدہ بنانے کیلئے کی گئی منصوبہ بندی ( ایس آر ڈی پی ) کا بھی جائزہ لیا۔ 2631 کروڑ روپئے کے مصارف سے شہر کے مختلف علاقوں میں ٹریفک کو باقاعدہ بنانے کیلئے جنکشن کی ترقی، بس شیلٹرس کو عصری تقاضوں سے لیس کرنے کے علاوہ دوسرے ترقیاتی کاموں کو جنگی خطوط پر پورا کرنے کی ہدایت دی۔ گریٹر حیدرآباد کے حدود میں 208 کروڑ روپئے کے مصارف سے 127 سڑکوں کو توسیع دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔
جن میں 57 سڑکوں کی توسیع کو ترجیحی بنیاد پر مکمل کرنے کی کے ٹی آر نے عہدیداروں کو ہدایت دی۔ 100جنکشن کو ترقی دینے کا لائحہ عمل تیار کیا گیا ہے۔ 30جنکشن کا سروے بھی مکمل ہوچکا ہے۔ اس اجلاس میں بس شیلٹرس کی تعمیرات، بس ریاپڈ ٹرانسپورٹ سسٹم کے علاوہ دوسرے ترقیاتی کاموں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT