Saturday , June 24 2017
Home / شہر کی خبریں / بازار میں پلاسٹک چاول کی فروخت کی تردید ، عوام کو توجہ نہ دینے کی اپیل

بازار میں پلاسٹک چاول کی فروخت کی تردید ، عوام کو توجہ نہ دینے کی اپیل

محکمہ سیول سپلائز چوکس ، کمشنر سیول سپلائز سی وی آنند کا بیان
حیدرآباد ۔ 7 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : کمشنر محکمہ سیول سپلائز سی وی آنند نے بازار میں پلاسٹک چاول فروخت ہونے کی تردید کرتے ہوئے افواہوں پر توجہ نہ دینے کی عوام سے اپیل کی ہے ۔ سی وی آنند نے کہا کہ بازار میں پلاسٹک چاول فروخت ہونے کی اطلاعات عام ہونے اور اس کی شکایتیں وصول ہونے کے بعد ان چاول کے نمونوں کا محکمہ سیول سپلائز کے کوالٹی کنٹرول سیل میں ٹسٹ کروایا گیا جس سے انکشاف ہوگیا کہ یہ پلاسٹک چاول نہیں ہے ۔ مزید مکمل ٹسٹ کے لیے ان چاول کے نمونوں کو کیمیکل ٹسٹ کے لیے اسٹیٹ فوڈ لیبارٹری کو روانہ کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ سیول سپلائز اس معاملے میں کافی چوکس ہے ۔ اس پر مزید گہری نظر رکھنے کے لیے ویجلنس انفورسمنٹ اور محکمہ سیول سپلائز کے عہدیداروں کو متحرک کردیا گیا ہے ۔ پلاسٹک چاول کیسا ہوگا اس کی کس طرح شناحت کی جائے ۔ پلاسٹک کے چاول کو عام چاول میں ملایا جارہا ہے کیا ؟ اگر پلاسٹک چاول ہے تو اس کی کس طرح نشاندہی کی جائے ۔ محکمہ سیول سپلائز کے عہدیدار ویڈیو کے ذریعہ عوام میں شعور بیدار کریں گے ۔ سی وی آنند نے کہا کہ اس معاملے میں رائیس ملرس کو چوکس کیا جائیگا اور جہاں بھی شک و شبہات پائے جائیں گے محکمہ کے عہدیدار وہاں پہنچ کر اس کا جائزہ لیں گے ۔ گریٹر حیدرآباد کے حدود میں چند دنوں سے یہ افواہیں گشت کررہی ہیں کہ پلاسٹک چاول فروخت کیا جارہا ہے ۔ محکمہ سیول سپلائز کے لیبارٹری میں کیا گیا ابتدائی ٹسٹ سے یہ ظاہر ہوگیا کہ وہ پلاسٹک چاول نہیں ہے ۔ پلاسٹک چاول ہونے کے کوئی بھی ثبوت اس چاول میں نہیں پائے گئے ۔ مزید مکمل ٹسٹ کے لیے ان چاول کے نمونوں کو اسٹیٹ فوڈ لیبارٹری  کو روانہ کیا گیا ہے ۔ محکمہ سیول سپلائز کوالٹی کنٹرول کے تجزیہ کار عثمان محی الدین محکمہ کے جنرل منیجر جئے دیوسنگھ ، اسسٹنٹ منیجر ٹکنیکل جی سائیدالو کی نگرانی میں نمونوں کا ٹسٹ کیا گیا ۔ اس چاول کو پانی میں رکھ کر بھی ٹسٹ کیا گیا اگر وہ پلاسٹک کا چاول ہوتا تو پانی کے اوپری سطح پر تیرتا تھا ۔ لیکن ایسا کچھ بھی نہیں ہوا ہے ۔ حاصل کردہ چاول کے نمونوں کو پکا کر بھی دیکھا گیا ۔ تمام ٹسٹوں کے بعد پلاسٹک کے چاول کی افواہوں میں کوئی سچائی نظر نہیں آئی ۔ شکایت کے بعد حاصل کردہ چاول کو اور عام چاول کو ملا کر پکایا گیا ۔ دونوں چاول میں کوئی فرق نظر نہیں آیا اور نہ ہی مزہ میں کوئی تبدیلی آئی ہے ۔۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT