Monday , August 21 2017
Home / ہندوستان / بحریہ میں خواتین کی ذمہ داریوں میں اضافہ

بحریہ میں خواتین کی ذمہ داریوں میں اضافہ

نئی دہلی ۔ 26 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستانی بحریہ خواتین کی ذمہ داریوں میں اضافہ کرنے کیلئے تیار ہے لیکن اس نے واضح کردیا ہیکہ ہنوز کوئی لڑاکا موقف انہیں نہیں دیا جائے گا۔ یہ اقدام حکومت کی جانب سے گذشتہ ہفتہ اس اعلان کے فوری بعد منظرعام پر آیا ہیکہ ہندوستانی فضائیہ میں جنگجو پائلیٹس کی حیثیت سے خواتین کو تعینات کیا جائے گا۔ ہندوستانی بحریہ نے اعلان کیا ہیکہ وہ دہلی ہائیکورٹ کے حالیہ حکم نامہ کو چیلنج کرنے کا ارادہ رکھتا ہے جس نے بحریہ کی سرزنش کی ہے کہ اس کے پاس خواتین کیلئے کوئی مستقل کمیشن نہیں ہے۔ بحریہ کے کمانڈرس کی جاریہ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی وزیردفاع منوہر پاریکر نے کہا کہ طیاروں کے علاوہ ضروری ہیکہ بحری جہازوں پر بھی خواتین کو تعینات کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلہ میں آئندہ چند دن میں اعلان ممکن ہے۔ ہندوستانی بحریہ نے وزارت دفاع کو تجویز روانہ کردی ہیکہ طیارہ بردار بحری جہازوں پر بھی خواتین کو تعینات کیا جانا چاہئے۔ خواتین کو بڑے پیمانے پر راحت رسانی کرتے ہوئے دہلی ہائیکورٹ نے 4 ستمبر کو درخواستوں کا ایک مجموعہ سماعت کیلئے قبول کرلیا تھا جن میں بحریہ میں خواتین کیلئے مستقل کمیشن کا مطالبہ کیا گیا تھا اور کہا گیا تھا کہ صنفی تعصب اور خدمات کے تعصب کو خواتین کی ترقی کا راستہ روکنے کی اجازت نہیں دی جانی چاہئے۔ عدالت نے درخواستوں کی سماعت کے بعد اپنے فیصلہ میں کہا تھا کہ خواتین مردوں کے شانہ بشانہ فوج میں موجود رہیں گی۔ اس پر ناراض ہونے کی کوئی بات نہیں ہے۔ خواتین کی ترقی کو تسلیم کرنا چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT