Wednesday , October 18 2017
Home / شہر کی خبریں / بدعنوانیوں کے خلاف تحقیقات سے اقلیتی اداروں میں ہلچل

بدعنوانیوں کے خلاف تحقیقات سے اقلیتی اداروں میں ہلچل

عہدیدار ، ملازمین اور درمیانی افراد میں خوف کا ماحول ، درمیانی افراد کے غائب ہونے سے اطمینان
حیدرآباد۔/25مارچ، ( سیاست نیوز) اقلیتی بہبود کی اسکیمات میں بے قاعدگیوں کے خاتمہ کیلئے ڈائرکٹر جنرل پولیس اے کے خاں کی جانب سے شروع کی گئی مہم سے تمام اقلیتی اداروں میں ہلچل پیدا کردی ہے اور مختلف اداروں کے عہدیدار و ملازمین کے علاوہ اسکیمات کی منظوری کا لالچ دینے والے درمیانی افراد میں خوف کا ماحول دیکھا جارہا ہے۔ اے کے خاں نے مختلف اسکیمات میں بے قاعدگیوں اور ان میں اندرونی ملازمین کی ملی بھگت کی اطلاعات پر حیدرآباد اور اضلاع میں اینٹی کرپشن بیورو کی خصوصی ٹیموں کے ذریعہ تحقیقات کا آغاز کیا اور کئی بے قاعدگیوں کے ثبوت اکٹھا کئے ہیں۔ اے سی بی کی اس کارروائی نے سارے محکمہ میں خوف کا ماحول پیدا کردیا ہے جبکہ عوام اے کے خاں کے ان اقدامات سے کافی خوش ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ اے سی بی کی کارروائیوں اور دھاوؤں کے بعد سے سرکاری دفاتر میں درمیانی افراد کی تعداد میں قابل لحاظ کمی واقع ہوئی ہے۔ اس طرح کے درمیانی افراد اقلیتی بہبود کے دفاتر کے بجائے کسی اور مقام پر امیدواروں کو طلب کرتے ہوئے اپنی سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔ اے کے خاں کی جانب سے تمام اقلیتی اداروں کے ملازمین اور عہدیداروں کا اجلاس طلب کئے جانے کے بعد سے صورتحال میں کافی تبدیلی دیکھی جارہی ہے اور کسی بھی ادارہ میں ملازمین کسی بھی اسکیم کے معاملہ میں مداخلت سے گریز کررہے ہیں حتیٰ کہ بعض دفاتر میں اس بارے میں گفتگو سے پرہیز کرتے ہوئے دیکھا گیا۔ ’شادی مبارک‘ سبسیڈی سے مربوط قرض اور اسکالر شپ اسکیم کے امیدوار اقلیتی دفاتر میں راست طور پر متعلقہ عہدیداروں سے رجوع ہورہے ہیں اور ان دفاتر میں اے سی بی کے خوف سے درمیانی افراد غائب ہوچکے ہیں۔ اس صورتحال سے نہ صرف عہدیداروں نے اطمینان کی سانس لی بلکہ امیدواروں کو بھی سہولت ملی ہے۔ امیدواروں کا کہنا ہے کہ اگر اقلیتی اداروں کے عہدیدار اور متعلقہ ملازمین مکمل دیانتداری اور فرض شناسی کے ساتھ خدمات انجام دیں تو انہیں درمیانی افراد سے رجوع ہونے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔ متعلقہ ملازمین کی لاپرواہی اور بروکرس سے ملی بھگت کے سبب عوام کو کئی ایک دشواریوں کا سامنا کرنا پڑ رہا تھا۔ شادی مبارک اسکیم اور قرض اسکیم کے سلسلہ میں درخواستوں کی جانچ کے آغاز کے بعد متعلقہ اداروں کے کئی ملازمین کو انتہائی خوف کے عالم میں دیکھا گیا بتایا جاتا ہے کہ بہت جلد کئی افراد کے خلاف مقدمات کے اندراج کا آغاز ہوگا اور گرفتاریاں بھی عمل میں آئیں گی۔

TOPPOPULARRECENT