Tuesday , October 24 2017
Home / کھیل کی خبریں / برطانوی اتھلیٹس پر ممنوعہ ادویات استعمال کرنے کا الزام

برطانوی اتھلیٹس پر ممنوعہ ادویات استعمال کرنے کا الزام

لندن ، 11 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) برطانیہ کے کھیلوں میں ممنوعہ ادویات کے انسداد کے ادارہ یوکیڈ نے کینیا کے دو ڈاکٹروں کے اس الزام کے بعد تحقیقات شروع کر دی ہیں کہ انھوں نے برطانوی اتھلیٹس کو کارکردگی میں اضافہ کرنے والی ادویات دی تھیں۔ ان ڈاکٹروں کا یہ بیان اخبار ’سنڈے ٹائمز‘ نے خفیہ طریقے سے ریکارڈ کیا تھا۔  اطلاعات کے مطابق کینیا کے جرائم کی تفتیش والے ادارہ نے اس ضمن میں گرفتاریاں بھی کی ہیں۔ یوکیڈ نے تحقیقات میں مدد دینے کیلئے دو تفتیش کار نیروبی بھیجے ہیں۔ ایک بیان میں برطانیہ کی کھیلوں کی تنظیم یوکے اتھلیٹکس نے سنڈے ٹائمز کے الزامات کو ’مبہم اور بے بنیاد‘ قرار دیتے ہوئے اخبار پر زور دیا کہ وہ تمام ملوث افراد کی تفصیل فراہم کرے۔ فوٹیج میں ڈاکٹروں کو دعویٰ کرتے دکھایا گیا ہے کہ انھیں برطانوی، کینیائی اور دوسرے اتھلیٹس نے خون میں اضافہ کرنے والی دوا اریتھروپوئٹین لگانے کیلئے رقم دی تھی۔ اخبار کے مطابق ڈاکٹروں نے ایک برطانوی اتھلیٹ کی دستاویزات اور خون کے نمونوں کے نتائج دکھائے جن سے ظاہر ہوتا ہے کہ انھوں نے اس اتھلیٹ کا علاج کیا تھا۔ ایک اور کینیائی شخص نے الزام عائد کیا ہے کہ تین دیگر برطانوی اتھلیٹ ان 50 کھلاڑیوں میں شامل تھے جنھیں کارکردگی میں اضافہ کرنے والی ممنوعہ ادویات دی گئی تھیں۔ اخبار کا کہنا ہے کہ جب دونوں ڈاکٹروں سے رابطہ کیا گیا تو انھوں نے ویڈیو میں کئے گئے دعوؤں کے بارے میں بات کرنے سے انکار کر دیا۔ ان کے ساتھی نے کہا ہے کہ اس نے اتھلیٹس کی مدد کرنے کے بارے میں جھوٹ بولا تھا، اور ڈاکٹروں پر بھی زور دیا تھا کہ وہ ’پیسہ کمانے‘ کیلئے جھوٹ بولیں۔ تاہم یوکیڈ کی سربراہ نکول سیپسٹیڈ کہتی ہیں کہ شواہد ’’سنگین تشویش کا باعث ہیں۔ ہم نے تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے اور شواہد کی حقیقت معلوم کرنے کیلئے ضروری اقدامات کر رہے ہیں‘‘۔ کینیا اتھلیٹکس کی دنیا میں صف ِاول کا ملک ہے۔ تاہم اسے مئی میں ڈوپنگ کے عالمی قوانین کی خلاف ورزی کا مرتکب پایا گیا تھا۔ ڈوپنگ کے عالمی ادارہ واڈا نے بدعنوانی کے کئی الزامات کے بعد کینیا کو اپنے قواعد کی خلاف ورزی کا مرتکب قرار دیا تھا۔ گزشتہ ماہ یوکیڈ کے چیئرمین نے تسلیم کیا تھا کہ لندن کے ایک ڈاکٹر کی جانب سے لگ بھگ 150 اتھلیٹس کو ممنوعہ ادویات دینے کے الزام سے نمٹنے میں ان سے غلطیاں ہوئی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT