Thursday , August 24 2017
Home / Top Stories / برطانیہ میں مسجد پر مسلم دشمن نعرے پینٹ کردیئے گئے

برطانیہ میں مسجد پر مسلم دشمن نعرے پینٹ کردیئے گئے

ڈونالڈ ٹرمپ کے صدر امریکہ منتخب ہونے کے بعد عالم گیر سطح پر مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز جرائم میں اضافہ

لندن ۔18ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام) بعض نامعلوم اشرار نے اسکاٹ لینڈ کی ایک مسجد پر اسلام دشمن نعرے پینٹ کئے ۔ پولیس اس واقعہ کی تحقیقات کررہی ہے ‘ اسے نفرت پر مبنی جرم قرار دیا گیا ہے ۔ پریشان کن تحریر کمبرلینڈ مسجد کی دیوار پر جو اسکاٹ لینڈ کے علاقہ گلاسگو میں کریگھل برٹ میں واقع ہے پینٹ کئے گئے تھے ۔ مسجد کی تصویریں دیوار پر تحریر کے ساتھ ٹوئیٹر پر امجد بشیر نے شائع کی ہیں ۔ اس نے اپنی شناخت بطور صنعت کار برطانیہ ظاہر کی ہے ۔ اس کے بموجب وہ مسلم طبقہ کا مہم جو اور مارکیٹنگ اور سوشل میڈیا کا ماہر ہے ۔ کمبرلینڈ مسجد میں توڑ پھوڑ بھی مچائی گئی اور اس کی دیواروں پر اسلام دشمن نعرے تحریر کئے گئے  ۔ انہوں نے ٹوئیٹر پرکہا کہ یہ اسلام سے دشمنی کا جنون رکھنے والی تنظیم ’’ ٹیل ماما ‘‘ کا کام ہے ۔ مسجد کی دیوار پر شرانگیز اسپرے تحریرکی گئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ’’ ساراسین گھر جاؤ ‘‘ کلاسیکل لاطینی میں ’’ ڈینس ولٹ ‘‘ کے معنی انشاء اللہ ہوتے ہیں اور یہ اصطلاح عوام نے اُس وقت استعمال کرنا شروع کی جب کہ پوپ اربن دوم نے اعلان کیا کہ یہ اصطلاح عیسائی بھی استعمال کرسکتے ہیں ۔

بازنطینی شہنشاہیت کے سلجوقی ترک اس علاقہ پر ماضی میں حکمراں رہ چکے ہیں ۔ ایک اور اصطلاح جو سلیبی مجاہدین مسلمانوں کا حوالہ دینے کیلئے استعمال کرتے تھے ‘اہانت انگیز ہے ۔ دریں اثناء تنظیم ’’ ٹیل ماما‘‘ نے کہا کہ یہ زبان اہانت انگیزہے ‘ ہمیںیقین ہے کہ جس شخص نے بھی یہ تحریر شائع کی ہے نظریاتی اعتبار سے بنیاد پرست ہے اور انتہا پسند بائیں بازو کی لفاظی کا ماہر ہے جس نے باقاعدہ طور پر اس تحریر کے اور اس کے متن کے ذریعہ سلیبیوں ( عیسائیوں ) کے جذبات مجروح کئے ہیں ‘ اس کے نتیجہ میں تہذیبوں میں تصادم بھی ہوسکتا ہے ۔اسکاٹ لینڈ پولیس کی خاتون ترجمان نے کہا کہ توڑپھوڑ کو نفرت انگیز جرم قرار دیا گیا ہے ۔ اسکاٹ لینڈ کی پولیس توثیق کرتی ہے کہ تحقیقات جاری ہیں ۔ توڑپھوڑ کے بارے میں محتاط انداز میں تفتیش کی جارہی ہے ۔ یہ واقعہ جرم کیلئے مددگار ثابت ہوسکتا ہے اور نفرت انگیز جرم کی تحقیقات اسکاٹ لینڈ پولیس کی ترجیح ہے ۔ اس سلسلہ میں پولیس کو فوجداری انصاف محکمہ کا بھی تعاون حاصل ہے ۔ تمام طبقات سے نفرت کا خاتمہ پولیس اور محکمہ انصاف دونوں کا مقصد ہے ۔ ڈونالڈ ٹرمپ کے صدر امریکہ منتخب ہونے کے بعد مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز جرائم میں  اضافہ ہوگیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT