Monday , August 21 2017
Home / Top Stories / بروسیلز میں ایرپورٹ اور میٹرو ریل اسٹیشن پر آئی ایس کے سلسلہ وار دھماکے

بروسیلز میں ایرپورٹ اور میٹرو ریل اسٹیشن پر آئی ایس کے سلسلہ وار دھماکے

35 ہلاک،200 سے زائد زخمی ، ہر طرف تباہی کے مناظر، ہمارے لئے یوم سیاہ،وزیراعظم بلجیم کا اٹیلی ویژن پر خطاب، یوروپ میں سخت سیکوریٹی
بروسیلز ۔ 22 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) یوروپ آج پھر ایک بار اسلامک اسٹیٹ (آئی ایس) کے سلسلہ وار بم دھماکوں سے دہل گیا، جہاں بروسیلز کے ایرپورٹ اور میٹرو ٹرین کو نشانہ بنایا گیا تھا اور اس میں تقریبا ً 35 افراد ہلاک ، 200 سے زائد زخمی ہوگئے۔ ان دھماکوں کے فوری بعد بلجیم میں سیکوریٹی انتہائی سخت کردی گئی اور ٹرانسپورٹ رابطہ مفلوج ہوگیا جبکہ وزیراعظم چارلس مشل نے اسے اندھی ، پرتشدد اور بزدلانہ کارروائی قرار دیا۔ انہوں نے قومی ٹیلی ویژن پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج سانحہ کا دن ہے اور یہ یوم سیاہ ہے۔ اسلامک اسٹیٹ گروپ نے ان حملوں کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ وزیر خارجہ ڈیڈیر رینڈرس نے خبردار کیا ہے کہ مشتبہ افراد اب بھی شہر میں موجود ہوسکتے ہیں جو کہ ناٹو اور یوروپین یونین کا مرکز ہے۔ آج ایسے وقت خونریزی کے واقعات سامنے آئے جبکہ چار دن قبل ہی پیرس دہشت گرد حملوں کے کلیدی مشتبہ شخص صالح عبدالسلام کی بروسیلز میں ڈرامائی گرفتاری عمل میں آئی تھی۔ بلجیم کے حکام یوروپ کو مطلوب ترین شخص عبدالسلام کی گرفتاری کے بعد چوکسی اختیار کئے ہوئے تھے کیونکہ اس نے تحقیقاتی عہدیداروں کو بتایا تھا کہ وہ بروسیلز میں حملوں کی منصوبہ بندی کر رہا تھا ۔ آج دو بم دھماکوں سے زیونٹم ایرپورٹ کا مین ہال تہس نہس ہوگیا۔ یہ دھماکے تقریباً 8 بجے صبح ہوئے۔ پراسیکیوٹر فریڈرک ویان لیو نے اندیشہ ظاہر کیا ہے کہ اس میں ایک خودکش بم دھماکہ تھا۔ تیسرا دھماکہ مالبیک میٹرو اسٹیشن پر ہوا جہاں ٹرین زد میں آئی ۔ یہ اسٹیشن شہر کے یوروپی یونین کے کوارٹر کے قلب میں واقع ہے۔ جس وقت دھماکہ ہوا مسافرین کا یہاں ہجوم تھا ۔ بروسیلز فائر بریگیڈ کے ترجمان پیرا میئس نے بتایا کہ ایرپورٹ پر تقریباً 15 افراد ہلاک ہوئے جبکہ بروسیلز کے میئر یوان مئیور نے کہا کہ زیر زمین دھماکہ میں تقریباً 20 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ زخمیوں کی تعداد 200 سے زائد بتائی گئی جن میں اکثر کی حالت تشویشناک ہے۔

ایرپورٹ پر نعشیں خون میں لت پت پڑی ہوئی تھی اور بعض کے جسم کے اعضاء بکھرے ہوئے تھے۔ عوام خوف و دہشت کے عالم میں دوڑنے لگے جبکہ ٹرمینل بلڈنگ دھوئیں سے بھر گئی تھی۔ ایرپورٹ بیاگیج سیکوریٹی عہدیدار جس کے ہاتھ دھماکوں کی زد میں آگئے ، اس نے ایک شخص کو عربی میں چیختے ہوئے دیکھا ، اس کے فوری بعد دھماکہ ہوا۔ اس نے کہا کہ کئی افراد اپنے ہاتھوں سے محروم ہوگئے۔ ایک شخص کے دونوں پیر دھماکوں کے زد میں آگئے ۔ ایسے ہی ایک پولیس ملازمین کو دیکھا گیا جس کا پیر زخمی ہوگیا تھا۔ بعد ازاں فوجی ٹیم نے ایرپورٹ میں موجود ایک مشتبہ بیاگ کو دھماکہ سے اڑادیا۔ میڈیا نے پولیس کو مطلع کیا تھا کہ ایک خودکش بیلٹ دکھائی دیا ہے جو پھٹ نہیں سکا تھا ۔ اسی طرح مالبیک اسٹیشن پر بھی مسافرین کی نعشیں خون میں لت پت پڑی ہوئی تھی اور زخمیوں میں پولینڈ کے دو اور برطانیہ کا ایک شہری شامل ہونے کی توثیق ہوئی ہے۔ سارے یوروپ میں ایرپورٹس پر چوکسی بڑھادی گئی ہے جن میں لندن ، پیرس اور فرینکفرٹ شامل ہیں۔ اس کے علاوہ نیویارک اور واشنگٹن میں بھی پرہجوم علاقوں اور ٹرین اسٹیشنس پر سیکوریٹی سخت کردی گئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT