Thursday , August 17 2017
Home / دنیا / بنگلہ دیش میں صوفی بزرگ کا مشتبہ افراد کے ہاتھوں قتل

بنگلہ دیش میں صوفی بزرگ کا مشتبہ افراد کے ہاتھوں قتل

ڈھاکہ ۔ 7 مئی ۔(سیاست ڈاٹ کام) بنگلہ دیش میں نامعلوم حملہ آوروں نے 65 سالہ عالم دین کو ہلاک کردیا ۔ آزاد خیال یونیورسٹی پروفیسر پر حملے کے تقریباً دو ہفتے بعد یہ واقعہ پیش آیا جو بالکل اُسی نوعیت کا ہے اور آئی ایس آئی ایس نے اس کی ذمہ داری قبول کی تھی ۔ 65 سالہ عالم دین شاہداﷲ کی نعش کے سیدھے کاندھے پر زخموں کے نشانات تھے ، اس کے علاوہ اُن کے گلے کو چھری سے کاٹ دیا گیا تھا ۔ اس سے پہلے ملک میں دانشوروں ، بلاگرس اور اقلیتوں کو اسلام پسند عناصر اسی طرح نشانہ بناتے آئے ہیں۔ مقامی افراد نے اُن کی نعش کا پتہ چلنے کے بعد پولیس کو اطلاع دی ۔ شاہداﷲ مقامی دوکاندار تھے اور ساتھ ہی ساتھ وہ صوفی بزرگ بھی تھے اور اس علاقہ میں اُن کے بیشمار مریدین تھے ۔ پولیس نے بتایا کہ مقامی ہاسپٹل میں نعش کا پوسٹ مارٹم کیا گیا اور پھر اُسے تدفین کیلئے عزیز و اقارب کے حوالے کردیا گیا ۔ ابتدائی تحقیقات میں پتہ چلا ہے کہ شاہداﷲ کا پڑوسیوں کے ساتھ جائیداد کا تنازعہ تھا اور شبہ ہے کہ قتل کی یہ وجہ ہوسکتی ہے لیکن پولیس سربراہ نے بتایا کہ یہ اسلام پسندوں کی کارستانی ہوسکتی ہے جنھوں نے اس سے پہلے بھی کئی افراد کو اسی طرح ہلاک کیا ۔

TOPPOPULARRECENT