Friday , September 22 2017
Home / ہندوستان / بچھڑا چوری کرنے کا الزام منی پور میں مسلم ہیڈماسٹر کابے رحمی سے قتل

بچھڑا چوری کرنے کا الزام منی پور میں مسلم ہیڈماسٹر کابے رحمی سے قتل

امپھال ۔ 4 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) گورنمنٹ پرائمری مدرسہ کے ایک ہیڈ ماسٹر کو بچھڑا (گائے کا بچہ) سرقہ کرنے کے الزام پر ہلاک کردیا گیا۔ منی پور کے امپھال ایسٹ ضلع میں یہ واقعہ پیش آیا جہاں 55 سالہ محمد حشمت علی کی نعش کیراؤ مکاتنگ گاؤں میں پیر کو ان کے گھر سے پانچ کیلو میٹر دور دستیاب ہوئی۔ برہم ہجوم نے اس وقت انہیں بے رحمی سے ہلاک کردیا جب ایک دیہاتی کا لاپتہ بچھڑا مبینہ طور پر ان کے پاس دیکھا گیا۔ محمد حشمت علی کی نعش پوسٹ مارٹم کیلئے ہاسپٹل میں رکھی گئی ہے جبکہ یہ بچھڑا پولیس کی تحویل میں ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ محض بچھڑے کی چوری کا الزام عائد کرتے ہوئے ایک مسلم شخص کو ہلاک کیا گیا ہے۔ ان کی نعش دستیاب ہوتے ہی مقامی افراد کی کثیر تعداد پولیس اسٹیشن پہنچ گئی اور خاطیوں کی گرفتاری کا مطالبہ کیا۔ ایک مسلم تنظیم نے مدرسہ ہیڈ ماسٹر کی تدفین سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ مرکز کو اس معاملہ میں مداخلت کرنی چاہئے۔ اس تنظیم نے جمعرات کو ریاست گیر بند کا بھی اعلان کیا ہے۔ محمد حشمت علی کے قتل کے خلاف جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے کنوینر محمد رضاالدین نے بتایا کہ مرحوم ایک دیانتدار اور سادہ طبعیت کے حامل ٹیچر تھے۔ ان پر ایک ایسا الزام عائد کیا گیا ہے جس کا ارتکاب وہ کبھی نہیں کرسکتے ۔ انہوں نے کہا کہ پولیس کو پتہ ہیکہ حملہ آور کون تھے لیکن وہ کارروائی سے گریز کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب تک انصاف نہیں ہوتا ہم مرحوم ٹیچر کا جنازہ نہیں اٹھائیں گے۔ اس واقعہ نے ریاست میں کانگریس حکومت کیلئے پریشان کن صورتحال پیدا کردی ہے۔

TOPPOPULARRECENT