Saturday , August 19 2017
Home / Top Stories / بھوپال انکاؤنٹر کی تحقیقات کا مطالبہ کرنے والے قوم دشمن کیسے ہوگئے

بھوپال انکاؤنٹر کی تحقیقات کا مطالبہ کرنے والے قوم دشمن کیسے ہوگئے

حکومت پر شکوک و شبہات کے ازالہ کی ذمہ داری: چدمبرم
چینائی 5 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) مدھیہ پردیش میں جیل توڑ کر فرار سیمی کے 8 کارکنوں کی ہلاکت کے واقعہ کی تحقیقات کا مطالبہ کرنے والوں کو قوم دشمن قرار دینے پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے سابق مرکزی وزیرداخلہ پی چدمبرم نے آج کہا ہے کہ وہ شبہات کا ازالہ کرنا چاہتے ہیں اور کوئی بھی جیل توڑ کر فرار ہونے کی حمایت نہیں کررہے ہیں۔ انھوں نے یہ سوال کیاکہ مذکورہ واقعات پر بعض شک و شبہات پیدا ہوگئے ہیں جس کا ازالہ کرتے ہوئے تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا تو قباحت کیا ہے؟ اگر تحقیقات کی درخواست کرنے والوں کو قوم دشمن قرار دیا گیا تو اس کا مطلب کیا ہے؟ مسٹر پی چدمبرم نے کہاکہ اگر مفرور سیمی کارکنوں کو پولیس زندہ گرفتار کرتی تو یہ انکشاف ہوتا تھا کہ وہ کس طرح فرار ہوئے اور کس نے ان کی اعانت کی۔

انھوں نے بتایا کہ مفرور قیدیوں کی کوئی بھی تائید نہیں کررہا ہے۔ کیا انھیں مفرور کارکنوں کو زندہ پکڑا گیا تھا؟ اور یہ جانکاری ضروری ہے کہ وہ کس طرح سے فرار ہوئے اور کس نے ان کی مدد کی تھی۔ واضح رہے کہ بھوپال جیل سے فراری کے بعد سیمی کے کارکنوں کو پولیس انکاؤنٹر میں مار دیا گیا تھا۔ یہ واقعہ بھوپال کے مضافات میں 31 اکٹوبر کو پیش آیا تھا۔ کانگریس لیڈر چدمبرم نے یہ نشاندہی کی کہ حکومت مدھیہ پردیش نے گزشتہ دنوں میں اس واقعہ کی 5 مختلف تحقیقات کا اعلان کیا ہے اور اب ریٹائرڈ جج کے ذریعہ تحقیقات کا قطعی فیصلہ کیا گیا ہے۔ حکومت بالآخر تحقیقات پر آمادہ ہوئی ہے لیکن صرف ایک دن میں یہ فیصلہ کیوں نہیں کرسکی۔

TOPPOPULARRECENT