Friday , September 22 2017
Home / ہندوستان / بھگوا جھنڈوں کو نقصان پہنچانے پر فرقہ وارانہ جھڑپ

بھگوا جھنڈوں کو نقصان پہنچانے پر فرقہ وارانہ جھڑپ

علی راج پور (مدھیہ پردیش) ۔ 4 مئی (سیاست ڈاٹ کام) قصبہ جوباٹ میں آج کشیدگی پھیل گئی جبکہ دو فرقوں کے افراد نے ایک دوسرے پر سنگباری کی کیونکہ مبینہ طور پر ایک چرچ کے قریب بھگوا جھنڈوں کو نقصان پہنچایا گیا تھا۔ بعدازاں یہاں کے برقی قمقمے دائیں بازو کی تنظیموں کے ارکان نے توڑ دیئے۔ پولیس نے 6 افراد بشمول دائیں بازو کی تنظیموں کے تین مشتبہ ارکان کو جھنڈوں کو نقصان پہنچانے کے الزام میں گرفتار کرلیا۔ یہ جھنڈے رام نومی تہوار کے سلسلہ میں چرچ کے قریب لگائے گئے تھے۔ صدر ضلع بی جے پی راکیش اگروال اور دیگر کے خلاف فسادات کرنے عبادتگاہ کو نقصان پہنچانے اور خواتین سے بدسلوکی کرنے کے الزام میں جوباٹ پولیس اسٹیشن میں مقدمے درج کئے گئے ہیں۔ پادری زیون چرچ اور ایک خاتون نے شکایت درج کروائی تھی۔ علی راج پور کی اے ایس پی وینا چوہان نے کہا کہ کل رات 9 بجے گڑبڑ کا آغاز ہوا جبکہ بعض لوگ شکایت درج کروانے ان کے پاس آئے۔ نرمل ریمنڈ اور ان کے بھائی نگم ریمنڈ نے بھگوا جھنڈوں کو نقصان پہنچایا تھا جو رام نومی کے سلسلہ میں چرچ کے قریب لگائے گئے تھے۔ پولیس عہدیدار نے کہا کہ پولیس نے دونوں بھائیوں کے خلاف مقدمہ درج کرکے ایس ڈی او پی کو ان کی گرفتاری کیلئے روانہ کرلیا ہے لیکن لوگ پولیس پر بے عملی کا الزام لگاتے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دو فرقوں کے ارکان نے ایک دوسرے پر سنگباری کی تھی۔ پولیس نے نرمل نگم اور جتیندر کو قانون تعزیرات ہند کی مختلف دفعات کے تحت گرفتار کرلیا ہے۔ دریں اثناء ہجوم نے دو یا تین برقی قمقمے جو چرچ کے باب الداخلہ پر لگائے گئے تھے ، توڑ دیئے جبکہ ڈھائی بجے شب پولیس فسادیوں کو منتشر کرنے کی کوشش کررہی تھیں۔

TOPPOPULARRECENT