Sunday , October 22 2017
Home / Top Stories / بھگونت مان کی ویڈیو فلم سے پارلیمنٹ کی سیکوریٹی کو خطرہ لاحق

بھگونت مان کی ویڈیو فلم سے پارلیمنٹ کی سیکوریٹی کو خطرہ لاحق

حکمران این ڈی اے ارکان کی ہنگامہ آرائی پر ایوانوں کی کارروائی ملتوی
نئی دہلی۔/22جولائی، ( سیاست ڈاٹ کام ) عام آدمی پارٹی کے ایم پی بھگونت مان کی جانب سے پارلیمنٹ عمارت کی سیکوریٹی کی فلمبندی کا تنازعہ آج لوک سبھا اور راجیہ سبھا میں گونج اُٹھا۔ اور ارکان پارلیمنٹ جس میں اکثریت حکمران این ڈی اے کی تھی مان کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کیا۔ اس مسئلہ پر بحث و تکرار کے باعث ایوان میں شور و غل اور ہنگامہ آرائی کے مناظر دیکھے گئے۔ بالآخر کارروائی کو ایک دن کیلئے ملتوی کردینا پڑا۔ دونوں ایوان میں گڑبڑ اسوقت شروع ہوئی جب این ڈی اے کی حلیف اکالی دل، بی جے پی اور شیو سینا ارکان نے کہا کہ بھگونت مان نے سماجی میڈیا پر ایک ویڈیو فلم پیش کرکے پارلیمنٹ کی سلامتی کیلئے جوکھم پیدا کردیا ہے جس میں عمارت کے مختلف راستوں اور سیکوریٹی انتظامات کو بتایا گیا ہے۔ این ڈی اے کی ہمنوائی کرتے ہوئے کانگریس اور لیفٹ پارٹیوں نے حلقہ پارلیمان سنگور ( پنجاب ) کے رکن کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا۔تاہم بی بے پی اور قومی جمہوری اتحاد کی اتحادی پارٹیوں نے شدید ہنگامہ کیا

جس کے بعد ایوان کی کارروائی 12بجے تک ملتوی کردی گئی۔ایوان کی کاررائی شروع ہوتے ہی بھارتیہ جنتا پارٹی اور شرومنی اکالی دل سمیت کئی پارٹیوں نے مسٹر مان کے ویڈیو کا معاملہ اٹھایا اور ان کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کرتے ہوئے ہنگامہ کیا۔کئی اراکین شور و غل کرتے ہوئے اپنی سیٹ سے اٹھ کر ایوان کے بیچو بیچ آنے لگے ۔اسی دوران سماجوادی پارٹی ،جنتادل یونائیٹیڈ اور راشٹریہ جنتا دل کے اراکین ریزرویشن کی حق تلفی نہیں چلے گی کی تختی لے کر اسپیکر کی کرسی کے سامنے آکر نعرے بازی اور ہنگامہ کرنے لگے ۔ڈی ایم کے اور بیجو جنتا دل کے اراکین بھی اپنی سیٹوں پر کھڑے ہوگئے ۔اسپیکر سمترا مہاجن نے کئی بار اراکین کو خاموش رہنے اور اپنی سیٹوں پر جانے کے لئے کہا لیکن کسی نے ان کی بات نہیں سنی اور شدید ہنگامے کے درمیان انہیں ایوان کی کارروائی 12بجے تک کے لئے ملتوی کرنی پڑی ۔

عام آدمی پارٹی کے لوک سبھا رکن بھگونت مان کے پارلیمنٹ کی سیکورٹی سسٹم کی ویڈیو گرافی کرکے سوشل میڈیا پر ڈالنے کے معاملے میں بحث کرانے کے مطالبہ پر برسراقتدار جماعت کی طرف سے ہنگامہ کی وجہ سے ایوان کی کارروائی ملتوی کرنی پڑی۔ایوان کی کارروائی شروع ہوتے ہی حکمراں بی جے پی اور شرومنی اکالی دل کے اراکین نے اس معاملے پر بحث کرانے کا مطالبہ کیا ۔ ڈپٹی چیرمین پی جے کورین نے اس دوران دیگر ضروری کاموں کو نمٹایا ۔ اس کے بعد بی جے پی اور شرومنی اکالی دل کے اراکین دوبارہ اس معاملے کو اٹھانے کی کوشش کرنے لگے ۔ اس پر کورین نے کہاکہ دوسرے ایوان کے اراکین کے معاملے کے سلسلے میں اس ایوان میں بحث نہیں کرائی جاسکتی ۔ یہ ایک تکنیکی معاملہ ہے ۔اس پر پارلیمانی امور کے وزیر مملکت مختار عباس نقوی نے کہا کہ یہ معاملہ پارلیمنٹ، ممبران پارلیمنٹ اور قومی سلامتی سے بھی متعلق ہے ۔ متعلقہ رکن کے خلاف قومی سلامتی قانون کے تحت کارروائی کرنی چاہئے ۔ یہ بہت سنگین مسئلہ ہے ۔ یہ صر ف کسی ایک ایوان کے رکن کا معاملہ نہیں ہے ۔مسٹر کورین نے کہا کہ یہ بہت سنگین معاملہ ہے اور اس پر حکومت کو خود ہی نوٹس لینا چاہئے اور مناسب کارروائی کرنی چاہئے ۔حکومت اگر اس پر نوٹس دیتی ہے تو بحث کرائی جاسکت

 

اسپیکر لوک سبھا  سے
بھگونت مان کی معذرت خواہی
نئی دہلی ۔ 22 ۔ جولائی : ( سیاست ڈاٹ کام ) : عام آدمی پارٹی کے رکن پارلیمنٹ بھگونت مان نے آج ہائی سیکوریٹی پارلیمنٹ کامپلکس کے متنازعہ ویڈیو پر اسپیکر لوک سبھا سمترا مہاجن کے روبرو حاضر ہوئے ۔ باوثوق ذرائع نے بتایا کہ اسپیکر کل شام سے ہی مان سے رابطہ قائم کرنے کی کوشش میں تھیں لیکن ان کا موبائل فون کارکرد نہیں تھا ۔ بالاخر آج صبح وہ رابطہ میں آگئے ۔ 12 منٹ کی ویڈیو فلم میں بھگونت مان کامنٹری کررہے ہیں جب کہ ان کی گاڑی سیکوریٹی بیرکیڈس سے گذرتے ہوئے پارلیمنٹ میں داخل ہورہی ہے ۔ جب کہ وہ ویڈیو میں کہہ رہے ہیں کہ میں آج تمہیں ایک نئی چیز دکھانے جارہا ہوں جو آپ نے کبھی نہیں دیکھی ہے ۔ بعد ازاں مان کو ایک کمرہ میں لے جاکر پوچھ تاچھ کی گئی اور انہیں کارروائی سے واقف کروایا گیا ۔ اس مسئلہ پر آج ایوان کو دو مرتبہ ملتوی کردینا پڑا ۔بعد ازاں انہوں نے اسپیکر سے معذرت خواہی کرلی ہے۔

TOPPOPULARRECENT