Sunday , August 20 2017
Home / سیاسیات / بہار ‘جی ایس ٹی بل منظور کرنے والی پہلی غیر بی جے پی ریاست

بہار ‘جی ایس ٹی بل منظور کرنے والی پہلی غیر بی جے پی ریاست

اسمبلی میں بل کی ندائی ووٹ سے منظوری ۔ سی پی آئی ایم ایل رکن اسمبلی کا واک آوٹ
پٹنہ 16 اگسٹ ( سیاست ڈاٹ کام ) بہار میں آج جی ایس ٹی پر دستوری ترمیمی بل کو منظوری دیدی گئی ۔ اس طرح بہار پہلی غیر بی جے پی ریاست ہوگئی جہاں اس قانون کو منظوری مل گئی ۔ چیف منسٹر نتیش کمار نے قبل ازیں اس ٹیکس قانون کے فوائد کی تشریح کی ۔ چونکہ ریاست میں تمام بڑی جماعتیں جیسے جے ڈی یو ‘ آر جے ڈی ‘ کانگریس اور بی جے پی اس قانون کی حامی تھیں اس لئے اس بل کو ندائی ووٹ سے منظوری دیدی گئی ۔ سی پی آئی ۔ ایم ایل کے رکن اسمبلی محبوب عالم نے جی ایس ٹی بل کی مخالفت کی اور ایوان سے واک آوٹ کردیا ۔ ایوان میں سی پی آئی ۔ ایم ایل کے تین ارکان اسمبلی ہیں لیکن آج صرف محبوب عالم موجود تھے ۔ بہار پہلی غیر بی جے پی اور بحیثیت مجموعی دوسری ریاست ہوگئی ہے جس نے جی ایس ٹی قانون کی منظوری دی ہے ۔ اس سے قبل آسام میں جی ایس ٹی بل کو منظوری دیدی گئی تھی ۔ دستوری ( 122 ویں ترمیمی ) بل 2014 جی ایس ٹی کو لوک سبھا اور راجیہ سبھا میں پہلے ہی منظوری دی جاچکی ہے ۔ جی ایس ٹی بل کو آزادی کے بعد سے واحد بڑے ٹیکس اصلاحات میں شمار کیا جا رہا ہے اور صدر جمہوریہ کی جانب سے جی ایس ٹی کونسل کی توثیق سے قبل ملک کی 29 کے منجملہ کم از کم 15 ریاستوں میں اس کو منظوری ملنی ضروری ہوتی ہے ۔ جی ایس ٹی کونسل کی جانب سے نئے ٹیکس شرح اور دوسرے مسائل پر فیصلے کئے جائیں گے ۔ مرکزی حکومت نے اپریل 2017 سے اس قانون پر عمل آوری کا منصوبہ بنایا ہے ۔ ریاستی اسمبلی میں وزیر کمرشیل ٹیکس بجیندر پرساد یادو نے جی ایس ٹی بل پیش کیا تھا جس میں مداخلت کرتے ہوئے چیف منسٹر نتیش کمار نے اس قانون کے فوائد گنوائے ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ وہ ابتداء سے جی ایس ٹی بل کے حامی رہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT