Thursday , August 17 2017
Home / سیاسیات / بہار میں امن و قانون کی صورتحال جنگل راج سے بھی بدتر

بہار میں امن و قانون کی صورتحال جنگل راج سے بھی بدتر

پانی ، سر سے اونچا ہوگیا، پارٹی لیڈر کے قتل پر رام ولاس پاسوان کا ردعمل
پٹنہ ۔ 8 ۔ فروری (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی وزیر رام ولاس پاسوان نے آج بہار میں امن و قانون کی ابتر صورتحال پر نتیش کمار حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ موجودہ حالات 90 کے عشرہ کے جنگل راج سے بدتر ہے۔ مرکزی وزیر امور صارفین اور اغذیہ و تقسیم غلام نظام نے کہا کہ اب جنگل راج نظر آتا ہے کیونکہ 1990-2005 (آر جے ڈی حکومت) کے دوران حاوی جنگل راج سے کہیں زیادہ حالات ابتر ہوگئے ہیں اور چیف منسٹر نتیش کمار کو اقتدار پر برقرار رہنے کا اخلاقی حق نہیں ہے کیونکہ عام آدمی کے تحفظ پر خطر ہوں گے ۔ مسٹر رام ولاس پاسوان نے لوک جن شکتی پارٹی لیڈر برنیتی سنگھ کے سوگوار خاندان سے ملاقات کی جنہیں گزشتہ ہفتہ گولی مارکر ہلاک کردیا گیا تھا ۔ بعد ازاں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جرائم کی شرح میں اضافہ سے بہار کی رسوائی ہورہی ہے جبکہ چیف منسٹر نتیش کمار اپنی پیٹھ پر سوار بوجھ ڈھونے میں مصروف ہیں۔ ایل جے پی صدر نے گزشتہ ہفتہ پٹنہ کے علاقہ کچی درگاہ میں پارٹی لیڈر کے قتل اور ان کی بیوی اور ہمشیرہ بسنتی پر حملہ کی سی بی آئی تحقیقات کا مطالبہ کیا ۔ یہ دریافت کئے جانے پر کہ پارٹی لیڈر کا قتل سیاسی نوعیت کا تھا۔ مسٹر رام ولاس  پاسوان  نے کہا کہ مقتول کے افراد خاندان نے اس سلسلہ میں لالو پرساد یادو کا نام لیا ہے جو کہ یہ کیس ایک سیاسی اثر و رسوخ رکھنے والے لیڈر کے خلاف ہے ۔ لیڈر حکومت بہارکو چاہئے کہ قتل کیس کی سی بی آئی تحقیقات کیلئے سفارش کرے۔ انہوں نے یہ دعویٰ کیا کہ بہار میں ان دنوں یہ چرچہ ہے کہ نتیش کمار کی زیر قیادت حکومت میں امن و قانون کی صورتحال ابتر ہوگئی ہے ۔ راشٹریہ جنتا دل کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہ مسٹر پاسوان نے کہا کہ این ڈی اے کے ساتھ حکمرانی کے وقت نتیش کمار کو مکمل آزادی دی تھی اور مجرمین کے خلاف لگام کس دی گئی تھی لیکن اب لالو پرساد یادو کے عمل دخل سے چیف منسٹر کے ہاتھ باندھ دیئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اب پانی سر سے اونچا ہوگیا اور امن و قانون کی صورتحال سنگین ہوگئی ہے ۔ ستم ظریفی یہ ہے کہ برسر اقتدار حکومت عام آدمی کے تحفظ میں ناکام ہوگئی ہے ۔ اس کے باوجود چیف منسٹر نتیش کمار اور آر جے ڈی قائدین اسمارٹ سٹی اور اسمارٹ گاؤں کی باتیں کر رہے  ہیں۔ دریں اثناء رام ولاس پاسوان کے فرزند اور ایل جے پی کے رکن پارلیمنٹ چراغ پاسوان نے بھی ریاست میں امن و قانون کی صورتحال پر نتیش کمار حکومت کو ہدف ملامت بنایا اور کہا کہ ریاست کے حالات صدر راج کے متقاضی ہیں۔ اپنے پارلیمانی حلقہ جموئی میں شیخ پورہ کے مقام پر پارٹی آفس کی افتتاحی تقریب کو مخاطب کرتے ہوئے چراغ پاسوان نے آر جے ڈی سربراہ لالو پرساد یادو کو تنقید کا نشانہ بنایا اور طنزیہ ریمارک کیا ہے کہ وہ، جس حکومت میں ساجھیدار رہے ہیں، وہاں پر قانون حکمراںنی ناممکن ہوجاتی ہے ۔ ریاست میں بہتر  حکمرانی قائم کرنے سے متعلق چیف منسٹر نتیش کمار کے دعویٰ کی قلعی کھولتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ترقی کی پہلی شرط بہتر امن و قانون ہوتی ہے لیکن بہار کے حالات تو بالکل جدگاانہ ہے اور عوام یہ سوچنے پر مجبور ہوگئے ہے کہ ریاست میں صدر راج ناگزیر ہوئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT