Wednesday , August 16 2017
Home / اضلاع کی خبریں / بیدر میں رحیم خان کو سماج کے ہر طبقہ کی تائید

بیدر میں رحیم خان کو سماج کے ہر طبقہ کی تائید

بیدر10؍فبروری( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) کرناٹک کے سابق وزیر ٹرانسپورٹ بی جی آر سندھیا جنتا دل یس کو چھوڑ کرکانگریس میں شامل ہونے پر پہلی مرتبہ یہاں کے ضمنی الیکشن میں کانگریس اُمیدوار رحیم خان کو مرہٹہ سماج کی مکمل تائید کے حوالے سے کہا کہ اس میں اب کوئی دورائے نہیں ہونا چاہئے کہ رحیم خان کو سماج کے ہرطبقہ کی تائید مل رہی ہے اور یہی وجہ ہے کہ بی جے پی اور جنتا دل یس دونوں کافی بوکھلاہٹ کا شکار ہیں کیونکہ الیکشن میں عوام کے دلوں میں جو امیدوار ہوتا ہے اور ان کے ضرور مسائل کو حل کرنے کی طاقت رکھتا ہے وہی جذبہ اس کے لیے انتخابی میدان میں کافی اہمیت کا حامل ہوتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ بیدر کے ضمنی الیکشن میں رحیم خان کو سماج کے ہر طبقہ کی مکمل تائید مل رہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ میرے علم میں یہ بات لائی گئی ہے کہ اس بار کانگریس کے امیدار کو ہی عوام منتخب کرنا چاہتے ہیں کیونکہ ان کی شخصی اور سیاسی مقبولیت میں کافی اچھال آیا ہے اور وہ کسی بھید بھاؤ کے سماج کے ہر طبقہ کے لیے کام کررہے ہیں یہ پوچھے جانے پر کہ انہوں نے جنتا دل یس کو کیوں خیرباد کہا۔ اس کے جواب میں انہوں نے کہاکہ جنتا دل یس پس پردہ بی جے پی سے ہاتھ ملارہی ہے اور یہ کام مرکز سے لے کر ریاستی سطح تک ہورہا ہے۔ اور میری 45سالہ سیاسی زندگی میں کبھی بھی مجھ پر فرقہ پرستی الزام نہیں لگا ہے۔ چونکہ جنتا دل یس نے فرقہ پرست جماعت سے اندورنی طور پر کام کرنا شروع کردیا تھا اسی لیے انہوں نے اس کو خیرباد کہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ بی جے پی ملک کو ہندوراشٹریہ بناناچاہتی ہے جو کبھی بھی اس کا خواب پورا نہیں ہوگا کیونکہ سیکولر زم ذہن رکھنے والا ہر ایک فرد اس فرقہ پرستی کے زہر کو اچھی طرح سے سمجھ چکا ہے اور اس کا زہر اگر پورے ملک میں پھیل گیا تو ملک کے تانے بانے بکھر کر رہ جائیں گے اور ملک کی تباہی کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا اور کہا کہ وہ ٹکنکل طور پر آج کانگریس کے رکن ہی ہیں اور وہ مرہٹہ سماج میں کافی مقبولیت کے حامی ہونے کے سبب اس سماج کو جنتا دل یس اور بی جے پی سے دوررکھنے کے کام کررہے ہیں اور کہا کہ ضلع اور تعلقہ پنچایت میں بھی کانگریس کے امیدوار کو منتخب کروانے کے لیے پارٹی کو ہرفرد کام کررہا ہے ۔ پریس کانفرنس میں سابق رکن پارلیمنٹ نرسنگ راؤ سوریہ ونشی کے علاوہ مرہٹہ سماج کے ذمہ دار موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT