Thursday , August 24 2017
Home / شہر کی خبریں / بیرون ممالک اعلیٰ تعلیم پر اوورسیز اسکیم اسکالر شپس تعطل کا شکار

بیرون ممالک اعلیٰ تعلیم پر اوورسیز اسکیم اسکالر شپس تعطل کا شکار

امیدواروں کے انتخاب کے باوجود رقم کی عدم اجرائی ، محکمہ اقلیتی بہبود کی لاپرواہی
حیدرآباد۔/22اکٹوبر، ( سیاست نیوز) تلنگانہ میں اقلیتی طلبہ کیلئے بیرونی ممالک کی یونیورسٹیز میں تعلیم کے حصول پر اسکالر شپ سے متعلق اسکیم گزشتہ 3ماہ سے تعطل کا شکار ہے۔ محکمہ اقلیتی بہبود نے اگرچہ دو مرحلوں میں اہل امیدواروں کا انتخاب کیا لیکن ابھی تک کسی امیدوار کو اسکالر شپ کی پہلی قسط جاری نہیں کی گئی۔ اوورسیز اسکالر شپ کے تحت بیرونی ممالک کی یونیورسٹیز میں اعلیٰ تعلیم کے سلسلہ میں 10لاکھ روپئے اسکالر شپ کی ادائیگی کی گنجائش ہے۔ یہ رقم دو مرحلوں میں جاری کی جائے گی لیکن افسوس کہ امیدواروں کے انتخاب کے باوجود ابھی تک پہلی قسط جاری نہیں کی گئی جس کے باعث طلبہ اور ان کے سرپرست مضطرب ہیں۔ کئی ایسے طلبہ ہیں جنہوں نے اسکیم میں درخواست داخل کرنے کے بعد بیرونی یونیورسٹی میں داخلہ حاصل کرلیا اور ہندوستان سے روانہ ہوگئے ان میں بعض ایسے طلبہ بھی شامل ہیں جنہوں نے حکومت کی اسکالر شپ کی امید میں قرض حاصل کرتے ہوئے یونیورسٹی کی فیس ادا کی۔ حکومت نے اس اسکیم کیلئے 25 کروڑ روپئے مختص کئے لیکن یہ رقم ابھی تک محکمہ اقلیتی بہبود کو جاری نہیں کی گئی۔ اقلیتی بہبود کے اعلیٰ عہدیدار اسکالر شپ کی اجرائی کے سلسلہ میں کوئی واضح تیقن دینے سے گریز کررہے ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ جب تک حکومت بجٹ جاری نہیں کرتی اسوقت تک وہ پہلی قسط کی اجرائی کے موقف میں نہیں ہوں گے۔ اس اسکیم کے تحت جملہ 510درخواستیں داخل کی گئی تھیں اور پہلے مرحلہ میں 280امیدواروں کو اہل قرار دیا گیا جبکہ شرائط کی عدم تکمیل پر 70امیدوار اسکیم کیلئے نااہل قرار دیئے گئے اور 210 امیدواروں کی فہرست کو قطعیت دی گئی۔ بتایا جاتا ہے کہ منتخب 210 امیدواروں کے اسنادات اور دیگر شرائط کی تکمیل کے بارے میں ری ویریفکیشن کا کام جاری ہے۔ یہ بات قطعی طور پر نہیں کہی جاسکتی کہ جن 210 امیدواروں کا انتخاب کیا گیا وہ فہرست ری ویریفکیشن کے بعد باقی رہے گی۔ اس اسکیم کے استفادہ کنندگان کے انتخاب کے سلسلہ میں خود محکمہ اقلیتی بہبود میں تال میل کی کمی صاف طور پر دکھائی دے رہی ہے۔ شرائط کے لزوم کے بارے میں بعض عہدیدار طلبہ کو رعایت دینے کے حق میں ہیں جبکہ بعض عہدیدار سختی سے شرائط پر عمل آوری پر مصر ہیں۔ عہدیداروں کی اس رسہ کشی میں طلبہ اور ان کے سرپرست اُلجھن کا شکار ہیں اور دیکھنا یہ ہے کہ قطعی فہرست کب تک تیار ہوجائے گی اور حکومت کب 25کروڑ روپئے کا بجٹ جاری کرے گی۔

TOPPOPULARRECENT