Sunday , August 20 2017
Home / شہر کی خبریں / بینکوں کو مسلسل 3 دن تعطیل سے مزید مشکلات کا خطرہ

بینکوں کو مسلسل 3 دن تعطیل سے مزید مشکلات کا خطرہ

نوٹ بندی کا ایک ماہ مکمل ، عوام کے صبر کا پیمانہ لبریز

حیدرآباد 8 ڈسمبر (سیاست نیوز) نوٹ بندی کے ایک ماہ بعد بھی کرنسی بحران جاری ہے۔ بینک اور اے ٹی ایم کیاش لیس ہونے سے عوام کی مشکلات میں دن بہ دن اضافہ ہورہا ہے۔ 3 دن کی مسلسل تعطیلات سے عوامی مسائل میں مزید اضافہ ہونے کے خطرات بڑھ گئے ہیں۔ 8 نومبر تا 8 ڈسمبر نوٹ بندی کا ایک ماہ مکمل ہوچکا ہے۔ ایک ماہ کے دوران عوام کئی مسائل سے دوچار ہوئے ہیں۔ پہلی تاریخ سے آج تک بینکوں سے سرکاری ملازمین کو تنخواہیں اور وظیفہ یابوں کو پنشن نہیں مل پایا ہے۔ طلب کے مطابق آر بی آئی تلنگانہ کو نئی کرنسی سربراہ کرنے میں ناکام ہوگئی ہے۔ ایک ماہ میں ریاست کو صرف 14 ہزار کروڑ روپئے کی نئی کرنسی آئی ہے جس میں 94 فیصد 2 ہزار روپئے کی نئی نوٹ ہے۔ گھنٹوں قطاروں میں کھڑے ہونے کے باوجود عوام بینک اور اے ٹی ایم سے رقم نکالنے میں ناکام ہورہے ہیں جس سے عوام کے صبر کا پیمانہ لبریز ہورہا ہے۔ شہر اور اضلاع کے کئی مقامات پر عوام اور بینک ملازمین کے درمیان بحث و تکرار ہوگئی ہے۔ عوام نے احتجاج کرتے ہوئے راستہ روکو دھرنا منظم کیا۔ عوام دن میں بینک اور راتوں میں اے ٹی ایم کی قطاروں میں وقت گزار رہے ہیں جس سے ان کی ناراضگی اور برہمی میں اضافہ ہورہا ہے۔ اس کے ساتھ ہی بینک کو مسلسل تین دن کی تعطیلات سے عوام کی مشکلات میں مزید اضافہ کا امکان ہے۔ ہفتہ کے دن بینک کو تعطیل ہے، اتوار کو عام تعطیل ہے اور پیر کو میلادالنبیؐ کی تعطیل ہے۔ اس طرح تین دن کی تعطیلات کے بارے میں سوچ کر عوام پریشان ہورہے ہیں کہ ان کے روز مرہ کا گذر بسر کیسے ہوگا۔ اب عوام کو تین دن تک اے ٹی ایم پر انحصار کرنا پڑرہا ہے۔ حیدرآباد کے علاوہ اضلاع کے 90 فیصد اے ٹی ایم سنٹرس غیر کارکرد ہیں جہاں اے ٹی ایم کارکرد ہیں وہاں گھنٹوں قطاروں میں کھڑے ہونے کے بعد صرف دو ہزار روپئے حاصل ہورہے ہیں۔ کئی افراد گھنٹوں انتظار کے باوجود رقم حاصل کرنے سے محروم ہیں کیوں کہ وہ قریب پہنچنے تک اے ٹی ایم سے رقم ختم ہورہی ہے۔ ان حالات میں آئندہ تین دن کی تعطیلات پر عوام فکرمند ہیں مگر ان کی پریشانیوں و مشکلات کا کوئی حل نہیں ہے۔ انھیں نہ چاہتے ہوئے بھی صرف اے ٹی ایم پر مکمل انحصار کرنا پڑے گا یا روز مرہ کی ضروریات کی تکمیل کے لئے دوسروں سے قرض حاصل کرنا پڑے گا۔ اس کے سواء ان کے پاس کوئی دوسرا راستہ نہیں ہے۔

TOPPOPULARRECENT