Thursday , August 24 2017
Home / شہر کی خبریں / بیٹی کے ذریعہ باپ تک مسلمانوں کے جذبات و احساسات پہنچائیں : عامر علی خاں

بیٹی کے ذریعہ باپ تک مسلمانوں کے جذبات و احساسات پہنچائیں : عامر علی خاں

ف12 فیصد تحفظات کی فراہمی کے لیے علماء و مشائخین اور ائمہ مساجد سے مزید رول ادا کرنے کی اپیل ، نظام آباد میں جلسہ سے خطاب

حقوق کے لیے لڑنے کا مسلمانوں میں شعور بیدار
نظام آباد سے شروع تحریک پورے تلنگانہ میں پھیل چکی ہے
روزنامہ سیاست کی تحریک کو جمعیتہ العلماء اور دیگر تنظیموں کی مکمل تائید
حیدر آباد:7؍ نومبر ( سیاست نیوز)نیوز ایڈیٹر روزنامہ سیاست جناب عامر علی خان نے 12 فیصد تحفظات کیلئے مسلمانوں میں شعور بیداری پیدا ہوجانے کا دعویٰ کرتے ہوئے کہا کہ عوام کا مثبت رد عمل اس کا ثبوت ہے ۔ حکومت بغیر کسی تاخیر کے فوری بی سی کمیشن تشکیل دے۔ جماعتی وابستگی سے بالا تر ہوکر تمام مسلمان اپنے اتحاد کا مظاہرہ کریں۔ان خیالات کا اظہار 12 فیصد تحفظات کے روح رواں جناب عامر علی خاں نیوز ایڈیٹر روزنامہ سیاست نے کیا ۔ وہ جمعیۃ العلماء ضلع نظام آباد (ارشد مدنی گروپ) کی جانب سے لمرا گارڈن فنکشن ہال نظام آباد میں 12 فیصد مسلم تحفظات کے ضمن میںمنعقدہ جلسہ عام سے مخاطب تھے۔ اس موقع پر فلور لیڈر کانگریس میونسپل کارپوریشن نظا م آباد ایم اے قدوس، صدر سینئر سٹیزنس ویلفیر سوسائٹی ایم اے شکور، احمد عبدالحلیم نائب صدر ریاستی ایم پی جے، سید نجیب علی ایڈوکیٹ،الماس خان صدر مسلم متحدہ محاذ نظام آباد، صدر ضلع اقلیتی ڈپارٹمنٹ کانگریس سمیر احمد ، صدر ضلع وقف کمیٹی جاوید اکرم، کانگریس قائد شہباز علی (ببلو خان ) کے علاوہ دوسرے موجود تھے۔ صدر ضلع نظام آبادجمعیۃ العلماء (ارشد مدنی گروپ ) حافظ لئیق خان نے جلسہ کی صدارت کی۔ مسٹر عامر علی خان نے کہا کہ روزنامہ سیاست کی جانب سے شروع کردہ 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک پر مسلمانوں نے تحصیل دفاتروں میں بڑے پیمانے پر نمائندگیاں کرتے ہوئے حکومت کو اپنے وعدے کی عمل آوری کیلئے جمہوری دبائو بنایا ۔ ریاست میں سوائے چیف منسٹر دونوں ڈپٹی چیف منسٹر س، تمام وزراء اور ارکان اسمبلی، ارکان پارلیمنٹ کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کیلئے تحریری نمائندگیاں پیش کی جارہی ہے۔ مسلمانوں میں اپنے حقوق کیلئے لڑنے کا شعور بیدار ہوگیا ہے۔ مسٹر عامر علی خان نے کہا کہ اگر حق مانگنے سے حاصل نہ ہونے کی صورت میں چھیننے کیلئے بھی تیار رہنا پڑیگا۔ اگر تعلیم اور ملازمتوں میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات حاصل ہوتے ہیں تو صرف ڈھائی لاکھ روپئے میں 280 مسلم طلبہ کو ایم بی بی ایس کورس میں داخلہ مل سکتا ہے۔ روزگار میں تحفظات فراہم کرنے سے تقریباً15 ہزار سرکاری ملازمتیںمسلمانوں کو حاصل ہوسکتی ہیں۔ ریاست میں مسلمانوں کا تعلیمی معیار تناسب سے اضافہ ہوا ہے مگر سرکاری ملازمتوں میں توقع کے مطابق نمائندگیاں نہیں مل رہی ہیں۔ ٹی آرایس نے اپنے انتخابی منشور میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا ہے ۔ 16 ماہ بعد بھی چیف منسٹر اپنے وعدہ کو عملی جامہ نہیں پہنائے۔ اگر حکومت مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کیلئے سنجیدہ ہے تو وہ سب سے پہلے بی سی کمیشن تشکیل دے تاکہ پسماندگی کاجائزہ لیتے ہوئے مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرسکے ۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ میں مسلمانوں کی آبادی 45لاکھ ہے ۔ 12 فیصد مسلم تحفظات سے اگر مسلمانوں کو ملازمتیں فراہم ہوتو راست یا بالواسطہ اس سے دیڑھ لاکھ مسلمانوں کو فائدہ ہوگا۔ سیاست کی جانب سے دی گئی پولیس ٹریننگ سے محکمہ پولیس میں 940 مسلم نوجوانوں کو ملازمت حاصل ہوئی ہے ۔ وہ علماء مشائخین اور ائمہ موذنین سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ جمعہ کے خطبہ میں 12 فیصد مسلم تحفظات کے معاملے میں مسلمانوں میں شعور بیدار کریں۔ ساتھ ہی مسلمان اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کریں اور اپنے حقوق کو منوانے کیلئے جمہوری انداز میں احتجاج کرتے ہوئے حکومت پر دبائو بنائے۔ حلقہ لوک سبھا نظام آباد کی نمائندگی کرنے والی ٹی آرایس کی رکن پارلیمنٹ مسز کے کویتا کو زیادہ سے زیادہ نمائندگی کریں۔ بیٹی کے ذریعہ باپ ( چیف منسٹر) تک مسلمانوں کے جذبات و احساسات کو پہونچائیں ۔ صدر ضلع نظام آباد جمعیۃ العلماء (ارشدمدنی گروپ) حافظ محمد لئیق خان نے روزنامہ سیاست کی جانب سے چلائی جانے والی مسلم تحفظات تحریک کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ تحریک کو مزید مستحکم کرنے کیلئے حیدرآباد میں ایک مشاورتی اجلاس طلب کیا جائے۔ تمام اہم شخصیتوں پر مشتمل ایک کمیٹی تشکیل دی جائے شہر کے علاوہ تمام اضلاع سے کمیٹی میں قائدین کو شامل کرتے ہوئے شہر اور اضلاع میں بڑے بڑے جلسہ عام منعقد کیا جائے۔ انہوں نے جمعیت العلماء کی جانب سے ضلع نظام آباد کے تمام تحصیلداروں کو 12 فیصد تحفظات کیلئے نمائندگیاں پیش کرنے کا اعلان کیا ۔کانگریس کے فلور لیڈر میونسپل کارپوریشن نظام آباد مسٹر محمد عبدالقدوس نے روزنامہ سیاست کی جانب سے شروع کردہ 12 فیصد مسلم تحفظات کا خیر مقدم کیا اور جمعیت العلماء (ارشد مدنی ) گروپ کی جانب سے نظام آباد میں جلسہ کا اہتمام کرنے پر اظہار تشکر کرتے ہوئے کہا کہ آزادی کی لڑائی میں اہم رول ادا کرنے والی جمعیت العلماء مسلم تحفظات کی تحریک میں بھی اہم رول ادا کرنے کی اُمید کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ مسلم تحفظات کے معاملے میں جمعیت العلماء کے علاوہ دوسری تنظیموں کی جانب سے منعقد کئے جانے والے پروگرامس کو کامیاب بنانے میں مکمل تعاون کرینگے ۔ کانگریس کے سینئر قائد سید نجیب علی نے کہا کہ ڈاکٹر راج شیکھر ریڈی کی جانب سے تعلیم و ملازمتوں میں دئیے گئے مسلم تحفظات سے تعلیم کے معاملے میں مسلمانوں میں انقلاب پیدا ہوا ہے۔ کے سی آرٹی آرایس کے انتخابی منشور میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا ہے۔ بی سی کمیشن تشکیل دینے کے بجائے سدھیر کمیٹی تشکیل دیتے ہوئے مسلمانوں کو گمراہ کیا جارہا ہے ۔ نوجوان مسلمانوں کے مستقبل کو پیش نظر رکھتے ہوئے نیوز ایڈیٹر روزنامہ سیاست عامر علی خان نے 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک کا آغاز کیا جس کو کامیاب بنانا تمام مسلمانوں کی ذمہ داری ہے۔ انہوں نے تحریک کو کامیاب بنانے کیلئے چند تجاویز بھی پیش کئے۔
صدر ضلع نظام آباد وقف کمیٹی مسٹر جاوید اکرم نے روزنامہ سیاست کی صحافتی اور فلاحی خدمات کو ناقابل فراموش قرار دیا۔ 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک کو کامیاب بنانے کیلئے مکمل تعاون کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ مسلم جماعت کو مسلمانوں کے مفادات کا تحفظ کرتے ہوئے 12 فیصد مسلم تحفظات کیلئے حکومت پر دبائو بنانے کے بجائے مسلم جماعت 12 فیصد تحفظات کو عملی جامہ پہنانے میں رکاوٹ بن رہی ہے جس کی وہ سخت مذمت کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ روزنامہ سیاست کی شروع کردہ مہم عوامی تحریک میں تبدیل ہوگئی ہے اور حکومت اس سے بخوبی واقف ہے۔ انہوں نے تمام مسلم سیاسی جماعتوں تنظیموں اوراداروں کو جماعتی وابستگی سے بالاتر ہوکر مسلم تحفظات تحریک کا حصہ بن جانے کا مشورہ دیا ۔ مولانا کریم الدین کمال نے 12 فیصد مسلم تحفظات کی عدم عمل آوری پر خمیازہ بھگتنے کیلئے تیار رہنے کا حکومت کو انتباہ دیا۔ صدر مسلم متحدہ محاذ نظام آباد محمد الماس خان نے روزنامہ سیاست کی جانب سے شروع کردہ مسلم تحفظات تحریک کا خیر مقدم کرتے ہوئے نوجوانوں کو اس تحریک میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کا مشورہ دیااور کہا کہ نظام آباد میں پہلے جلسہ سے شروع ہوئی مسلم تحفظات کی تحریک سارے تلنگانہ میں پھیل چکی ہے۔ مسلمان بڑے پیمانے پر سرکاری عہدیداروں اور منتخب عوامی نمائندوں کو یادداشتیں پیش کررہے ہیں۔ صدر سینئر سٹیزن ویلفیر سوسائٹی مسٹر ایم اے شکور نے کہا کہ ورنگل لوک سبھا کے ضمنی انتخاب کے پیش نظر مسلمان حکومت پر جمہوری انداز مین دبائو بنائے۔ صدر ضلع نظام آباد کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ مسٹرسمیر احمد روزنامہ سیاست کی جانب سے شروع کردہ مسلم تحفظات تحریک کا خیرمقدم کرتے ہوئے تحریک کو کامیاب بنانے میں اپنی جانب سے مکمل تعاون کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ مسلم تحفظات کے معاملے میں کے سی آر کی نیت ٹھیک نہیں ہے۔اسمبلی میں قرار داد منظور کراکر مرکز کو روانہ کرنے کا اعلان کیا جو مسلمانوں کیساتھ دھوکہ دہی کے سوا کچھ نہیں ہے۔ پروگرام کا آغاز حافظ افروز کی قرأت کلام سے شروع کیا گیا ۔اس جلسہ میں سی پی ایم کی جانب سے دستخطی مہم کا آغاز کیا گیا۔ سی پی ایم ٹائون سکریٹری گوردھن کی قیادت میں دستخطی مہم کا آغاز جناب عامر علی خان نے کیا۔ اس موقع پر اشفاق احمد خان ایڈیٹر روزنامہ نظام آباد مارننگ ٹائمز، محمد غوث ایڈیٹر محور،محمد اویس خان ایڈیٹر مومن ٹائمز، محمد خالد خان چیف ایڈیٹر روزنامہ مومن ٹائمز،عبدالکریم ببو قائد کانگریس ، ایم اے مقیت صدر ضلع انڈین یونین مسلم لیگ، سکریٹری سرجیل پرویز، ویلفیر پارٹی آف انڈیا صدر انور خان، سی پی ایم سکریٹری گوردھن، رفیق خان، حافظ عبدالکریم صدر بانسواڑہ، حافظ ابراہیم صدر آرمور، مولانا اعجاز بانسوارہ، مولانا طلحہ شجاع الرحمن قاسمی ، مولانا ہاشم بیگ ،حافظ امجد، حافظ سراج ، حافظ امتیاز، حافظ اشرف، سید ظفر علی نمائندہ سیاست آرمور، محمدغوث علی خاموش نمائندہ سیاست یلاریڈی، کل جماعتی قائدین بھی موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT