Saturday , September 23 2017
Home / Top Stories / بی جے پی اور آر ایس ایس پر خوف کا ماحول پیدا کرنے کا الزام

بی جے پی اور آر ایس ایس پر خوف کا ماحول پیدا کرنے کا الزام

سنگھ پریوار کے نظریات کو شکست دینے اور زعفرانی پارٹی کو اقتدار سے بیدخل کرنے کا عزم : راہول
نئی دہلی ۔11  جنوری (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس کے نائب صدر راہول گاندھی نے بی جے پی اور آر ایس ایس کے خلاف اپنی سخت تنقیدوں میں مزید شدت پیدا کرتے ہوئے ان دونوں جماعتوں پر عوام میں ڈروخوف کا ماحول پیدا کرنے کا الزام عائد کیا اور دعویٰ کیا  کہ کانگریس ہی سنگھ پریوار کے نظریات کو شکست دیتے ہوئے زعفرانی جماعت کو اقتدار سے بیدخل کرے گی۔ راہول نے اس تاثر کا اظہار کیا کہ یہ دراصل دو فلسفوں کے درمیان ٹکراؤ ہے جبکہ ان کی پارٹی (کانگریس) کا فلسفہ عوام کو بے خوف رہن کی ترغیب دیتا ہے لیکن بی جے پی کا فلسفہ عوام میں ڈر اور خوف کا ماحول ہے۔ راہول نے مزید کہا کہ ’’یہ دو فلسفوں کی لڑائی ہے۔ یہ کوئی نئی لڑائی نہیں ہے۔ قدیم لڑائی ہے۔ کانگریس کا فلسفہ کہتا ہیکہ خوفزدہ نہ ہوں۔ دوسرا فلسفہ کہتا ہیکہ ان (عوام) میں ڈرخوف اور ہراسانی پیدا کی جائے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ ’’آپ بی جے پی کی پالیسیوں کو دیکھئے۔ ان کا مقصد ہی ملک کے عوام کو خوفزدہ کرنا ہے۔ دہشت گردی، ماؤنوازی اور نوٹ بندی سے ڈراؤ۔ میڈیا کو خوفزدہ کیا جائے۔ دو تین ماہ کے دوران سارے ملک میں انہوں (بی جے پی) نے یہ خوف پھیلایا ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی نے مزدوروں اور کسانوں سے کہا کہ خواہ کچھ بھی ہوجائے وہ خوفزدہ نہ ہوں۔ انہیں 100 دن روزگار کی ضمانت دی جائے گی اور کوئی بھی انہیں مارکٹ قیمت دیئے بغیر ان کی زمینات حاصل نہیں کرسکے گا لیکن نریندر مودی نے ان (مزدوروں اور کسانوں) کی دولت اور زمینات کو چھین لیا۔ راہول نے کہا کہ جھارکھنڈ، چھتیس گڑھ اور مدھیہ پردیش میں جہاں آدی واسی اپنی زمینات، پانی اور جنگلات پر حقوق کیلئے اٹھ کھڑے تھے، انہیں گولی مار دی گئی۔ راہول گاندھی نے مزید کہا کہ ’’یہ لوگ (بی جے پی اور آر ایس ایس) سمجھتے ہیں کہ وہ عوام میں ڈرخوف پھیلاتے ہوئے حکمرانی کرسکیں گے لیکن کانگریس پارٹی انہیں شکست دے گی اور اقتدار سے بیدخل کرے گی۔ ہم ان (آر ایس ایس۔ بی جے پی) سے نفرت نہیں کرتے لیکن ہم ان کے نظریات کو شکست دیں گے‘‘۔ راہول نے کہا کہ ہندوستان ایک طاقتور ملک ہے اور اس کے عوام دنیا میں کسی سے نہیں ڈرتے۔

TOPPOPULARRECENT