Tuesday , April 25 2017
Home / سیاسیات / بی جے پی نے ناگپور کو ’شہر جرائم‘ بننے چھوڑ دیا ؟

بی جے پی نے ناگپور کو ’شہر جرائم‘ بننے چھوڑ دیا ؟

ممبئی کا پٹنہ سے تقابل مگر چیف منسٹر کو آبائی شہر کی فکرنہیں، شیوسینا کی شدید تنقید
ممبئی ، 16 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) چیف منسٹر مہاراشٹرا دیویندر فرنویس پر شدید لفظی حملے میں خود اُن آبائی مقام ناگپور میں لا اینڈ آرڈر کی ناقص صورتحال ہونے کا الزام عائد کرتے ہوئے شیوسینا نے آج کہا کہ اس شہر کو بی جے پی کی گرفت سے ضرور بچانا چاہئے اور حیرانی ظاہر کی کہ آیا یہ شہر دنیا کا دارالحکومت ِ جرائم بننے جارہا ہے۔ سینا نے پارٹی ترجمان ’سامنا‘ کے اداریہ میں لکھا کہ چیف منسٹر اور اُن کے لوگ (بی جے پی قائدین) کی نظریں ممبئی اور پونے پر ہیں جب کہ خود سی ایم کا شہر ناگپور بُری حالت میں ہے۔ اگرچہ سی ایم ممبئی کا تقابل پٹنہ سے کررہے ہیں ، انھیں پہلے جواب دینا چاہئے آیا ناگپور کو دنیا کی شہر جرائم بننے کیلئے چھوڑ دیا گیا ہے۔ یہ اداریہ دونوں پارٹیوں کے درمیان تعلقات بلدی چناؤ سے قبل اب تک کی پستی میں پہنچ جانے کے پس منظر میں سامنے آیا ہے، حالانکہ وہ ریاست اور مرکز میں بدستور اقتدار میں شریک ہیں۔

اداریہ نے کہا کہ حال میں ناگپور ڈینگی کی لپیٹ میں آیا اور بی جے پی کنٹرول والا بلدی نظم و نسق اس کے پھیلاؤ پر قابو پانے سے قاصر رہا، جس کے برخلاف سینا حکمرانی والے ممبئی کارپوریشن نے صورتحال سے نمٹنے کیلئے معقول انتظامات کئے۔ اداریہ نے دعویٰ کیا کہ ناگپور میں غیرقانونی تعمیرات فروغ پارہے ہیں اور سارے شہر کی سڑکیں کھود کر چھوڑ دی گئی ہیں جہاں کئی افراد اپنی جانیں گنوا چکے ہیں۔ وہاں کوئی سڑکیں یا فٹ پاتھس نہیں بلکہ صرف گڑھے ہیں۔ کنٹراکٹرز کی کچھ گرفت نہیں ہوتی جس کے نتیجے میں سڑکوں کی مصیبت خیز حالت ہے۔ ناگپور میں لا اینڈ آرڈر کی ابتر صورتحال کا اسکولوں پر بھی خراب اثر پڑرہا ہے۔ سی ایم کا تعلق ناگپور سے ہے اور امور داخلہ کا قلمدان بھی رکھتے ہیں۔ پھر بھی عوام کو ہر روز ناخوشگوار واقعات کا جوکھم ہے۔خواتین بھی محفوظ نہیں ہیں۔ قتل، ڈکیتی اور ریپ کے واقعات بڑھ رہے ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT