Monday , September 25 2017
Home / Top Stories / بی جے پی کا قول و فعل متضاد ‘ سبق سکھانے کا اعلان

بی جے پی کا قول و فعل متضاد ‘ سبق سکھانے کا اعلان

ترقی ایجنڈہ بنانے سے گریز ‘ گورکھپور سانحہ تحقیقات کا مطالبہ ،اکھلیش کا بیان
لکھنؤ، 18 اگست ( سیاست ڈاٹ کام ) سماج وادی پارٹی (ایس پی) کے صدر اور اتر پردیش کے سابق چیف منسٹر اکھلیش یادو نے بھارتیہ جنتا پارٹی کے قول اور فعل میں تضاد کا الزام لگاتے ہوئے آج کہا کہ 2019 کے لوک سبھا انتخابات میں یوپی، بنگال اور بہار کے لوگ اسے مناسب جواب دیں گے ۔ مسٹر یادو نے آج یہاں صحافیوں کو بتایا کہ بی جے پی کہتی کچھ ہے اورکرتی کچھ ہے ۔ لوگ اب اس کو سمجھ چکے ہیں۔ آہستہ آہستہ وہ اسے سبق سکھائیں گے ۔ مسٹر یادو نے 27 اگست کو پٹنہ میں اپوزیشن پارٹیوں کی ریلی میں شرکت کا پہلے ہی اعلان کردیاہے ۔ وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ کو ‘ڈیجیٹل سی ایم’ بتاتے ہوئے چیلنج کیا کہ مسٹر یوگی بتائیں کہ 100 برس میں کب تھانوں میں جنم اشٹمی نہیں منائی گئی۔ ان کا کہنا تھا کہ مسٹر یوگی کا یہ کہنا غلط ہے کہ اکھلیش حکومت میں تھانوں میں جنم اشٹمی منانے کی روایت بند کر دی گئی ۔ انہوں نے اعلان کیا کہ ریاست میں سماجوادی پارٹی کی حکومت بننے پر تمام تھانوں کو تہوار منانے پانچ لاکھ روپے دیے جائیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ جنم اشٹمی ان کا پسندیدہ تہوار ہے ۔ ان کی اہلیہ نے جنم اشٹمی کا ورت رکھاتھا۔ بچوں نے جھانکیاں سجائی تھیں اور ‘ڈیجیٹل وزیر اعلی’ کہتے ہیں کہ سماج وادی حکومت میں تھانوں میں جنم اشٹمی بند ہو گئی تھی۔ ایس پی صدر نے کہا کہ بی جے پی اور اس کی حکومت ترقی کی بات کیوں نہیں کرتی۔ جنم اشٹمی ، نماز اور کانوڑیوں کی بات کیوں کرتی ہے ؟ ایسا لگتا ہے کہ بی جے پی ترقی کو سیاسی ایجنڈے کا حصہ نہیں بننے دینا چاہتی۔ انہوں نے کہا کہ بات سوچھ بھارت ابھیان کی کی جارہی ہے لیکن گائیں سڑکوں پر گھوم رہی ہیں۔اکھیلیش نے گورکھپور کے بابا راگھوداس میڈیکل کالج میں ہوئی بچوں کی اموات کی تفتیش سپریم کورٹ کے جج سے کرانے کا مطالبہ کیا۔ جج سے تفتیش کرانے میں اگر کوئی پریشانی ہے تو حکومت کو سی بی آئی سے تفتیش کرانی چاہئے۔ اکھیلیش نے کہاکہ آکسیجن کی کمی کی وجہ بدعنوانی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT