Wednesday , October 18 2017
Home / سیاسیات / بی جے پی کو2019 میں اقتدار چھن جانے کاخوف :جے ڈی یو

بی جے پی کو2019 میں اقتدار چھن جانے کاخوف :جے ڈی یو

پٹنہ، 8 مئی (سیاست ڈاٹ کام)جنتا دل یونائیٹیڈ (جے ڈی یو) نے آج کہا کہ ملک میں سیکولر قوتوں کے متحد ہونے کی تیاریوں سے مرکز میں حکمراں قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے ) کے بڑے جزء بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کو ابھی سے لوک سبھا انتخابات میں اقتدار چھن جانے کا خوف لاحق ہوگیا ہے ۔ جے ڈی یو ترجمان راجیو رنجن پرساد نے کہا کہ گزشتہ تین سال سے اقتدار کامزہ لے رہی بی جے پی کو ابھی سے 2019 میں اقتدار سے محروم ہو جانے کا خوف لاحق ہوگیا ہے ۔ گزشتہ عام انتخابات سے ہی غیر بی جے پی سیکولر جماعتوں میں ووٹوں کی تقسیم کا فائدہ اٹھا رہی بی جے پی کا چین ان پارٹیوں کی یکجہتی سے ہی چھن گیا ہے ۔ مسٹر پرساد نے کہا کہ یہی وجہ ہے کہ ممکنہ اپوزیشن یکجہتی سے 2019 کے لوک سبھا انتخابات میں فیصلہ کن کردار ادا کر سکنے والی پانچ ریاستوں اتر پردیش، بہار، مغربی بنگال، اڑیسہ اور جھارکھنڈ میں بی جے پی نے اخلاقیات طاق پر رکھ کر توڑ پھوڑ اور انتشار پیداکرنے والی اپنی علیحدگی پسند حکمت عملی پر کام تیز کر دیا ہے ۔ بی جے پی علیحدگی پسند حکمت عملی کے تحت خواہ اب کتنی بھی کوشش کر لے اسے کامیابی ملنے والی نہیں ہے۔ جے ڈی یو ترجمان نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے عوام مخالف، علیحدگی پسند اور مطلق العنانی نے پورے ملک کو بی جے پی بمقابلہ غیر بی جے پی خیموں میں تقسیم کر دیا ہے ۔ اس لحاظ سے بی جے پی، غیر بی جے پی پارٹیوں کی یکجہتی کے ساتھ ہی 2019 میں اقتدار سے باہر نظر آرہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جیسے بی جے پی نے پانچ اہم ریاستوں پر توجہ مرکوز کی ہے ، ویسے ہی ان ریاستوں کے تمام غیربی جے پی سیکولر جماعتوں کو اپنے اپنے ایجنڈے کو کنارے رکھ کر بی جے پی کے اقتدار کا تختہ الٹنے کے لئے کم از کم مشترکہ پروگرام لے کر چلناہوگا۔مسٹر پرساد نے کہا کہ اس سلسلے میں جے ڈی یو کے قومی صدر اور بہار کے وزیر اعلی نتیش کمار کی کوشش بالکل صحیح سمت میں جاری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ باعث تسکین ہے کہ غیر بی جے پی تقریبا ساری پارٹیاں مسٹر کمار کی پیش کردہ تجاویز کے ساتھ ہیں اور بی جے پی کو اقتدار سے باہر کرنے کے لئے متفقہ طورپر متحد ہیں۔

TOPPOPULARRECENT