Thursday , July 27 2017
Home / شہر کی خبریں / تالاب کی زمین پر عمارتیں کیسے تعمیر ہوئیں

تالاب کی زمین پر عمارتیں کیسے تعمیر ہوئیں

کلکٹر حیدرآبادسے ہائی کورٹ کا استفسار، حلف نامہ داخل کرنے کی ہدایت
حیدرآباد۔/9جولائی،( ایجنسیز ) بنڈلہ گوڑہ میں سورن چیرو کو غیرمجاز قبضوں سے بچانے میں ناکامی کیلئے حیدرآباد ڈسٹرکٹ ایڈمنسٹریشن کو ذمہ دار قرار دیتے ہوئے حیدرآباد ہائی کورٹ نے کلکٹر کو ایک حلف نامہ داخل کرتے ہوئے اس بات کی وضاحت کرنے کی ہدایت دی کہ وہ عدالتی احکام کے باوجود ’ فل ٹینک لیول ‘ میں تعمیرات کو روکنے میں کیوں ناکام ہوئے ہیں۔ ہائی کورٹ کی ایک ڈیویژن بنچ جو کارگذار چیف جسٹس رمیش رنگناتھن اور جسٹس ایم ستیہ نارائنا مورتی پرمشتمل ہے، پرائمری فشرمین کوآپریٹیو مارکٹنگ سوسائٹی لمیٹیڈ کی جانب سے داخل کئے گئے تحقیر کے ایک کیس کی سماعت کررہی ہے۔ ہائی کورٹ نے اگسٹ 2015 میں سوسائٹی کی جانب سے داخل کی گئی مفاد عامہ کی ایک درخواست پر ایک عبوری حکم دیا تھا اور متعلقہ عہدیداران مجاز کو ہدایت دی تھی کہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ ایف ٹی ایل کے اندر کوئی تعمیرات نہ ہونے پائیں۔ سوسائٹی کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ عدالت کے احکام کے باوجود کئی اثر و رسوخ رکھنے والے اشخاص تالاب کی زمین پر قبضہ کررہے ہیں اور تعمیرات کو جاری رکھے ہوئے ہیں۔ ہائی کورٹ کی اس ڈیویژن بنچ نے کلکٹر ضلع حیدرآباد سے کہا کہ اس میں ذی اثر اشخاص کے ملوث ہونے سے متعلق درخواست گذار کے الزامات کے پیش نظر اس مسئلہ پر اہم توجہ دی جائے اور ایک ہفتہ کے اندر ایک حلف نامہ داخل کرتے ہوئے اس جھیل کے تحفظ کیلئے اب تک کئے گئے اقدامات اور کارروائی کی تفصیلات پیش کی جائیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT