Monday , October 23 2017
Home / اضلاع کی خبریں / تحفظات سے پہلے تقررات کے سبب مسلمانوں کو نقصان

تحفظات سے پہلے تقررات کے سبب مسلمانوں کو نقصان

عادل آباد /6 جنوری ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) ضلع عادل آباد کے تمام پولیس اسٹیشنوں میں پولیس کارکردگی پر اظہار اطمینان کرتے ہوئے ضلع ایس پی ڈاکٹر ترون جوشی نے پولیس عہدیداروں کو عوامی مسائل کی یکسوئی بنا کسی تاخیر انجام دینے کی ہدایت دی ۔ موصوف مستقر عادل آباد کے پولیس کانفرنس ہال میں ضلع سے تعلق رکھنے والے سرکل انسپکٹرس ، انسپکٹرس سب انسپکٹرس کے جائزہ اجلاس سے مخاطب تھے ۔ اس موقع پر انہوں نے محکمہ پولیس میں 1225 جائیدادوں پر تقررات کا تذکرہ کرتے ہوئے ضلع عادل آباد کے بے روزگار نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے پر ریاستی حکومت کے اقدام کی ستائش کیا ۔ پولیس کے محکمہ سیول میں 157 آرمڈس 185 ٹی ایس ایس پی میں 883 جائیدادوں پر تقررات کی خاطر جاریہ ماہ کی 11 تاریخ سے آن لائین درخواستیں حاصل کی جارہی ہیں ۔ جس کا سلسلہ 4 فروری تک برقرار رہے گا ۔ درخواست گذار ایس سی ، ایس ٹی ززرے کیلئے 200 روپئے او سی ، بی سی زمرے کیلئے 400 روپئے فیس داخل کرنا ہوگا ۔ علاوہ ازیں بی سی ، او سی امیدوار کو انٹرمیڈیٹ ایس سی ایس ٹی طبقہ کے افراد کو دسویں جماعت تعلیمی صداقت نامہ داخل کرنا لازمی قرار دیا گیا ۔ آرمڈ ریزرو AR کاسٹیبل امیدواروں کو ڈیولپنگ لائیسنس دو تا تین سال تجربہ کے تحت داخل کرنا ہوگا ۔ دو پہیہ والی ( موٹر سائیکل ) استعمال کا لائیسنس پر بھی امیدوار کو نشانات حاصل ہوسکتے ہیں ۔ خواتین زمرے کے تحت 60 جائیدادوں پر تقررات کئے ج ارہے ہیں ۔ جن میں سیول پولیس می 41 آرمڈ ریزرو میں 19 شامل ہیں ۔ درخواستوں کی ادخال کے بعد 3 اپریل سے پولیس امیدوارو ںکا تحریری امتحان ہوگا ۔ اس اجلاس میں ایڈیشنل سپرنٹنڈنٹ پولیس شریمتی رادھیکا بھی موجود تھی ۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بے جا نہ ہوگا کہ مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی عدم فراہمی کے بناء پر ضلع عادل آباد کے محکمہ پولیس میں جائیدادوں پر تقررات میں 144 مسلم نوجوانوں کو روزگار سے مایوسی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ جبکہ چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے ا نتخابات کے دوران مسلمانوں کی پسماندگی کا احساس کرتے ہوئے بنا کسی مطالبہ کے 12 فیصد تحفظآت فارہم کرنے کا تیقن دیا تھا ۔ اگرچہ موصوف اپنے تیقن پر عمل کرتے تو شاید ریاست میں ہزاروں مسلمانوں کو ملازمتیں فارہم ہوسکتی تھی ۔ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ کے تیقن کو یاد دلانے کی غرض روزنامہ سیاست کی جانب سے مسٹر عامر علی خان نے 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک کا آغاز کیا جس کے پیش نظر ریاست کے تمام حصوں میں تحریک کا استقبال کرتے ہوئے ریالیاں جلسہ ، جلوس ، بھوک ہڑتال ، مقامی افراد کی جانب سے تحریک چلانے کا سلسلہ برقرار ہے ۔ اس کے باوجود چیف منسٹر کی خاموشی کے بناء پر ملازمتوں میں مسلمانوں کو بڑے پیمانے پر نقصان کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ سرکاری ملازمتوں میں تقررات کے دوران 12 فیصد مسلم کوٹہ الگ سے مختص کیا جاتا تو مسلم نوجوانوں کے ساتھ انصاف ہوتا ۔ ملازمتوں کے حاصل ہونے سے ہزاروں بے روزگار نوجوانوں کو روزگار فراہم ہوسکتا ۔ ہزاروں افراد نے خاندانوں کی دعاء میں حکومت کے ساتھ ہوتی ۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT