Monday , August 21 2017
Home / سیاسیات / ترنمول کانگریس کے ارکان پر رشوت ستانی کے الزامات

ترنمول کانگریس کے ارکان پر رشوت ستانی کے الزامات

تحقیقات کیلئے لوک سبھا کی اخلاقیات کمیٹی کو اسپیکر سمترا مہاجن کی ہدایت
نئی دہلی ۔ 16 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) اسپیکر لوک سبھا سمترا مہاجن نے آج اعلان کیا کہ ترنمول کانگریس کے ارکان کے خلاف رشوت ستانی کے الزامات کی لوک سبھا اخلاقیات کمیٹی تحقیقات کرے گی کیونکہ یہ الزامات انتہائی سنگین ہیں جس کا پارلیمنٹ کی بنیادی ساکھ و اعتبار پر راست اثرات مرتب ہوسکتے ہیں۔ سمترا مہاجن نے ایوان میں وقفہ سوالات کے فوری بعد یہ اعلان کیا جس سے ایک دن قبل بی جے پی ، کانگریس اور سی پی آئی ایم کے ارکان نے ترنمول کانگریس کے بعض ارکان پر رشوت ستانی کا الزام عائد کیا تھا اور دعویٰ کیا تھا کہ اسٹنگ آپریشن میں اس بات کا ثبوت مل چکا ہے کہ انہوں نے رشوت لی تھی۔ بی جے پی، کانگریس اور سی پی ایم ارکان نے اس واقعہ کی تحقیقات کا مطالبہ کیا تھا ۔ سمترا مہاجن نے کہا کہ ’’ایوان کے بعض ارکان کے مبینہ غیر اخلاقی حرکات کا اخبارات میں ذکر کیا گیا ہے اور گزشتہ روز ایوان میں چند ارکان نے اس مسئلہ کو ا ٹھایا تھا ۔ یہ الزامات انتہائی سنگین نوعیت کے ہیں جس سے پارلیمنٹ اور اس کے ارکان کی ساکھ و اعتبار پر سنگین اثرات مرتب ہوسکتے ہیں۔ چنانچہ ان کی تحقیقات ضروری ہے‘‘۔ مہاجن نے سینئر بی جے پی لیڈر ایل کے اڈوانی کی قیادت میں 15 رکنی اخلاقیات کمیٹی سے ان الزامات کی تحقیقات کے بعد رپورٹ پیش کرنے کی خواہش کی ہے۔

ترنمول ارکان پر رشوت کے ا لزامات
اپوزیشن پر ممتا کی تنقید
کلچنی ۔ 16 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) ترنمول کانگریس کے بعض ارکان پارلیمنٹ کی مبینہ رشوت ستانی کے متعلق متنازعہ اسٹنگ آپریشن پر تنقیدوں کا سامنا کرنے والی مغربی بنگال کی چیف منسٹر ممتا بنرجی نے آج الزام عائد کیا کہ اپوزیشن جماعتیں اسمبلی انتخابات سے قبل ترنمول کانگریس کی نیک نامی متاثر کرنے کیلئے خفیہ ساز باز کرچکی ہے۔ ممتا نے ایک انتخابی ریالی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میڈیا کا ایک گوشہ بھی اپوزیشن جماعتوں کے ساتھ ہے اور بہت جلد وہ ان تمام کو بے نقاب کریں گی۔ ممتا بنرجی نے کہا کہ انہیں مغربی بنگال کے عوام پر پورا بھروسہ ہے اور وہ اس ضمن میں ریاستی عوام سے انصاف چاہیں گی۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ اپوزیشن جماعتیں مغربی بنگال کو تقسیم کرنا چاہتی ہیں۔ ممتا بنرجی نے جذباتی انداز میں کہا کہ ’’جب تک میں زندہ ہوں اپوزیشن جماعتوں کو ریاست تقسیم کرنے نہیں دوں گی‘‘۔

TOPPOPULARRECENT