Wednesday , September 20 2017
Home / ہندوستان / تعلیمی ادارہ میں موبائل فونس کا استعمال مضر : دارالعلوم

تعلیمی ادارہ میں موبائل فونس کا استعمال مضر : دارالعلوم

سہارنپور ، 10 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) دارالعلوم دیوبند نے آج کہا کہ ہندوستان کے ساتھ ساتھ بیرون ملک کے تعلیمی اداروں نے بھی جماعتوں میں موبائل فونس کا استعمال سختی سے ممنوع قرار دے رکھا ہے کیونکہ وہ تعلیم کے معیار کو ’’شدید متاثر‘‘ کرتے ہیں۔ اسلامی درسگاہ کے کارگزار نائب مہتمم مولانا عبدالخالق مدراسی نے آج کہا کہ نہ صرف دارالعلوم بلکہ ہر تعلیمی ادارہ میں ملٹی میڈیا فونس ممنوع ہیں۔ انھوں نے کہا کہ دہلی یونیورسٹی، جے این یو اور برطانیہ اور امریکہ کی کئی یونیورسٹیاں طلبہ کو کلاس رومس میں ملٹی میڈیا فونس استعمال کرنے کی اجازت نہیں دیتے ہیں کیونکہ ایسے آلات سے تعلیمی معیار پر بہت مضر اثر پڑتا ہے۔ مولانا مدراسی نے کہا کہ مندروں، گردواروں، گرجاگھروں اور مساجد میں بھی لوگوں سے اپنے موبائل فونس بند کرلینے کیلئے کہا جاتا ہے تاکہ عبادت کے دوران کسی کی بھی توجہ میں خلل نہ پڑنے پائے۔ انھوں نے کہا کہ ایسے طلبہ جو اپنی فیملیوں سے دور رہتے ہیں، وہ اپنے متعلقین کے ساتھ ربط میں برقرار رہنے کیلئے روایتی فونس کا استعمال کرسکتے ہیں۔ ’’اسٹوڈنٹس تعلیمی اداروں کو حصول تعلیم کیلئے آتے ہیں۔ اگر اُن کے پاس سے ملٹی میڈیا فونس برآمد ہوں تو اُن کے خلاف تادیبی کارروائی کی جائے گی۔‘‘

TOPPOPULARRECENT