Sunday , October 22 2017
Home / Top Stories / تعلیم میں تلنگانہ کو سر فہرست بنانے سخت محنت کا مشورہ

تعلیم میں تلنگانہ کو سر فہرست بنانے سخت محنت کا مشورہ

گورنر نرسمہن کی صدارت میں وائس چانسلرس کا اجلاس۔ ہدایات پر عمل کرنے کڈیم سری ہری کاتیقن
حیدرآباد /6 اکٹوبر ( سیاست نیوز ) گورنر ای ایس ایل نرسمہن نے تلنگانہ کی تعلیم کو ملک میں سرفہرست بنانے یونیورسٹیز کو سخت محنت کا مشورہ دیا ۔ ڈپٹی چیف منسٹر کڈیم سری ہری نے اندرون 6 ماہ تمام یونیورسٹیز خدمات کو آن لائین کرتے ہوئے 1061 جائیدادوں پر تقررات کا اعلان کیا ۔ تلنگانہ کی مختلف یونیورسٹیز کے وائس چانسلرس کے ساتھ آج گورنر کی صدارت میں امبیڈکر اوپن یونیورسٹی میں اجلاس منعقد ہوا ۔ جس میں ڈپٹی چیف منسٹر کڈیم سری ہری محکمہ تعلیم کی اسپیشل پرنسپل سکریٹری راجیو اور اچاریہ ہائیر ایجوکیشن کونسل کے صدرنشین پاپی ریڈی کے علاوہ تلنگانہ کے تمام یونیورسٹیز کے وائس چانسلرس نے شرکت کی ۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ گورنر نے تعلیمی معیار کو بلند کرنے اور ملازمتوں سے مربوط کورسیس کا آغاز کرنے کے علاوہ دوسری جو تجاویز پیش کی ہیں حکومت ان کا احترام کرتی ہے اور آئندہ 6 ماہ بعد پھر وائس چانسلرس کا اجلاس طلب کرکے گورنر کو کارروائی رپورٹ پیش کی جائیگی ۔ کڈیم سری ہری نے بتایا کہ محکمہ فروغ انسانی وسائل کے سروے میں تلنگانہ کا تعلیمی معیار بہتر ہونے کی رپورٹ ملی ہے ۔ ایس سی طبقات کی تعلیم میں تلنگانہ سرفہرست ہے ۔ ایس ٹی طبقات کی تعلیم میں تلنگانہ کو ملک میں دوسرا مقام حاصل ہوا ہے ۔ تلنگانہ کی عثمانیہ یونیورسٹی ‘ ورنگل کی کاکتیہ یونیورسٹی اور جے این ٹی یو کو NAAC سرٹیفکیٹ حاصل ہوا ہے ۔ ماضی میں عثمانیہ یونیورسٹی کو اے شناحت تھی جو اب بڑھ کر اے پلس ہوچکی ہے ۔ تمام یونیورسٹیز کے ملحقہ کالجس میں داخلوں کیلئے آدھار کو لازم قرار دیا گیا ہے جس کی مرکز نے ستائش کی ہے ۔ اجلاس میں محکمہ تعلیم کے اقدامات سے پاور پوائنٹ کے ذریعہ گورنر کو واقف کریا گیا ۔ گورنر نے یونیورسٹیز کالجس کو مرکز تعلیمی سرگرمیوں کے اکیڈیمی کیلنڈر کے تحت عمل کا مشورہ دیا ۔ آئندہ تعلیمی سال اکیڈیمک کیلنڈر پر سختی سے عمل کا ڈپٹی چیف منسٹر نے گورنر کو تیقن دیا ۔ تلنگانہ میں کرپشن کا خاتمہ ہونے کا دعوی کرتے ہوئے گورنر نے یونیورسٹیز خدمات کو آن لائین کرنے ہدایت دی ۔ تمام یونیورسٹیز اور ملحقہ کالجوں میں سی سی کیمرے اور بائیو میٹرک مشن لگانے کی ڈپٹی چیف منسٹر کڈیم سری ہری نے وائس چانسلرس کو ہدایت دی ۔ جاریہ سال یونیورسٹیز پر 419 کروڑ روپئے خرچ کا اعلان کیا ۔ پی ایچ ڈی سرٹیفکیٹ معاملے میں یونیورسٹیز کو خصوصی توجہ دینے ہدایت دی گئی ۔ یونیورسٹیز میں زیر تعلیم طلبہ کو ملازمت کے مواقع فراہم کرنے ڈیمانڈ کے مطابق کورس متعارف کرانے سے بھی اتفاق کیا گیا ۔ ہاسٹلس میں انہیں طلبا کو قیام کی اجازت دی جائے گی جو یونیورسٹیز میں زیر تعلیم ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT