Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ اور ایران کی تہذیب و تمدن میں یکسانیت

تلنگانہ اور ایران کی تہذیب و تمدن میں یکسانیت

میں ایرانی تہذیب کا مداح ، مامیڈی ہری کرشنا کا خطاب
حیدرآباد۔9فبروری(سیاست نیوز)اسلامی جمہوریہ ایران میںاسلامی انقلاب کی کامیابی کے 37ویں سال کے موقع پر سفارت خانہ ایران برائے حیدرآباد ‘ ایران تھیٹر ٹروپ سفیر برائے امن ودوستی اور سالار جنگ میوزیم کے اشتراک سے منعقدہ تقریب سے مہمانِ خصوصی کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے  مامیڈی ہری کرشنا ڈائرکٹرلینگویج اینڈ کلچرل نے کہاکہ ایران اور تلنگانہ کی انقلابی تحریکوں میںبہت زیادہ یکسانیت پائی جاتی ہے ۔ انہوںنے مزیدکہاکہ جہاں پر ایرانی عوام نے اپنے عظیم رہنما آیت اللہ خمینی کی اسلامی انقلابی تحریک کا بھر پور ساتھ دیا وہیں اپنی ناقابلِ فراموش قربانیوںکے ذریعہ تلنگانہ تحریک کے روح رواں کے چندرشیکھر رائو نے ساٹھ سالوں سے اپنے وجود کا احساس دلانے کی جدوجہد کرنے والے تلنگانہ حامیو ںکے حوصلوں کو مزیدطاقتور بنانے کاکام کیا ہے ۔سالا ر جنگ میوزیم ہال میںمنعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مامیڈی ہری کرشنا نے کہاکہ میںایرانی تہذیب کا بڑا مداح ہوں کیونکہ تلنگانہ اور ایران کی تہذیب وتمدن میںبھی یکسانیت پائی جاتی ہے ۔ انہوںنے فارسی کے عظیم شاعر مولانا جلال رومی کا بھی اس موقع پر ذکر کیا اور کہاکہ ایران کے بعد ریاست حیدرآباد ہی ایک ایسی مملکت تھی جہاں پر فارسی زبان کا عام چلن تھا ۔ انہو ںنے مزیدکہاکہ جس طرح ایران کا شہر اصفہان اپنے تاریخی ورثے کی حیثیت سے دنیابھر میںمشہور ہے اسی طرح شہر حیدرآباد بھی ایرانی فن تعمیر کے شاہکاروں سے دنیابھر میںممتاز ومقبول ہے۔مامیڈی ہری کرشنا نے کہاکہ شہرحیدرآباد میںایران کے سفار ت خانے کے قیام سے ریاست تلنگانہ او رایران کے درمیان دوریوں کو ختم کرنے کا جو اقدام اٹھایا گیا ہے اس کو مزید آگے بڑھانے کی ضرورت ہے۔تقریب کی ایک او رمہمان مقرر محترمہ عزیز بانو ایچ او ڈی شعبہ فارسی مولانا آزاد اُردو یونیورسٹی نے فارسی زبان میںخطاب کرتے ہوئے کہاکہ فارسی زبان کا ریاست تلنگانہ کی مشترکہ تہذیب میںاہم رول رہا ہے ۔انہوں نے مزیدکہاکہ ایران سے زیادہ فارسی کے شعراء ہندوستان میںپیدا ہوئے ہیں ۔انہوں نے ہندوستان بالخصوص ریاست تلنگانہ میںفارسی زبان کی حفاظت ‘ ترقی اور ترویج کے لئے اٹھائے گئے اقدامات کو ناقابلِ فراموش بھی قراردیا۔جناب علی پیر یاد سینئر سفیرایران قونصلیٹ برائے حیدرآباد نے بھی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے فارسی زبان ‘ ایرانی تہذیب وتمدن میں ہندوستان کے رول کی ستائش کی ۔ بعدازاں ایرانی تھیٹر ٹروپ کے فن کاروں کی جانب سے ڈرامہ بھی پیش کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT