Wednesday , August 23 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ اور اے پی کے دو آئی اے ایس عہدیداروں پر مقدمہ چلانے کی راہ ہموار

تلنگانہ اور اے پی کے دو آئی اے ایس عہدیداروں پر مقدمہ چلانے کی راہ ہموار

ایمار اسکام کیس میں قانونی کارروائی کے لیے سی بی آئی کو مرکز کی اجازت
حیدرآباد ۔ 8 ۔ جولائی : ( سیاست نیوز ) : سی بی آئی کی جانب سے بی پی آچاریہ ، پرنسپل سکریٹری حکومت تلنگانہ اور ایل وی سبرامنیم ، اسپیشل چیف سکریٹری حکومت آندھرا پردیش کے خلاف ایمار اسکام کیس میں مقدمہ چلایا جائے گا ۔ مرکزی حکومت نے اس کے لیے سی بی آئی کو اجازت دے دی ہے ۔ مرکزی حکومت نے ایمار ٹاون شپ پراجکٹ کو فروغ دینے میں بدعنوانیوں میں ان کے مبینہ رول کے لیے آندھرا پردیش اور تلنگانہ کے ان دو سینئیر آئی اے ایس عہدیداروں کے خلاف قانون انسداد رشوت ستانی کے تحت مقدمہ چلانے کی آج سی بی آئی کو اجازت دے دی ۔ دونوں عہدیدار 2005 تا 2010 کے دوران آندھرا پردیش انڈسٹریل انفراسٹرکچر کارپوریشن کے وائس چیرمین اور منیجنگ ڈائرکٹر تھے ۔ جس نے شہر میں گچی باولی علاقہ میں 500 ایکڑ سرکاری اراضی پر ٹاون شپ ڈیولپ کرنے کے لیے دوبئی کی کمپنی ایمار کمپنی اور دہلی کی کمپنی ایم جی ایف کے ساتھ ڈیولپمنٹ معاہدہ کیا تھا ۔ ان دونوں آئی اے ایس عہدیداروں کو خانگی افراد کو اراضی معاملت میں حد سے زیادہ فائدہ پہنچانے اور حکومت کے خزانہ کے لیے ایک بڑا نقصان کرنے کے لیے سی بی آئی نے ملزم قرار دیتے ہوئے ان کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا ۔ تاہم ان پر مقدمہ نہیں چلایا جاسکا کیوں کہ ان کے خلاف پریوینشن آف کرپشن ایکٹ کے تحت قانونی کارروائی کرنے کے لیے مرکز کی اجازت درکار تھی ۔ اگرچیکہ متعلقہ ریاستی حکومتوں نے ان دو عہدیداروں کے خلاف مقدمہ چلانے کے لیے سی بی آئی کو منظوری نہیں دی تاہم مرکزی حکومت نے اس کی اجازت دے دی ۔ جس سے ان پر مقدمہ چلانے کے لیے راہ ہموار ہوگئی ۔ ذرائع نے یہ بات بتائی ۔ مرکزی تحقیقاتی ایجنسی اب یہاں سی بی آئی عدالت کو مرکز کے اس فیصلہ کی اطلاع دے گی تاکہ ان دو عہدیداروں کے خلاف مقدمہ چلایا جائے ۔۔

TOPPOPULARRECENT