Sunday , August 20 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ بجٹ کے اہم خد وخال حیدرآباد میں چار ملٹی اسپیشالیٹی ہاسپٹلس

تلنگانہ بجٹ کے اہم خد وخال حیدرآباد میں چار ملٹی اسپیشالیٹی ہاسپٹلس

حیدرآباد۔14مارچ ( سیاست نیوز) تلنگانہ کے وزیر فینانس ایٹالہ راجندر نے حکومت کی تمام اہم بجٹ کا تفصیلی تذکرہ کیا ۔ایٹالہ راجندر نے شہر حیدرآباد میں عوام کو طبی سہولتوں کی فراہمی کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ شہر حیدرآباد کے سرکاری دواخانوں کی تعداد کم و بیش وہی ہے جبکہ اس کی آبادی میں کئی گناہ اضافہ ہوا ہے اور عوامی صحت کی دیکھ بھال کی بڑھتی ہوئی ضروریات کو پورا کرنے کیلئے موجود عثمانیہ ‘ گاندھی اور کنگ کوٹھی دواخانوں کے علاوہ سالانہ ادائیگی کی بنیاد پر روبو بینک آف نیدر لینڈ کی امداد سے شہر حیدرآباد کے اطراف چار نئے سوپر اسپیشالیٹی ہاسپٹلس کے قیام کا حکومت نے فیصلہ کیا ہے اور ورنگل کے ایم جی ایم دواخانہ کا رتبہ بڑھاکر اسے سوپر اسپیشالیٹی ہاسپٹل بنانے کا فیصلہ کیا گیا ۔
ایک سال میں دو لاکھ ڈبل بیڈرومس فلیٹس کی تعمیر
وزیر فینانس نے کہا کہ حکومت ہند کی جانب سے رہنمایانہ خطوط کو قطعیت دینے کے فوری بعد ان مکانات کی تعمیر کا آغاز کیا گیا اور بالخصوص ریکارڈ وقت میں سکندرآباد کے آئی ڈی ایچ کالونی میں اب تک 377ڈبل بیڈروم فلیٹس پہلے ہی تعمیر کئے جاچکے ہیں اور چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ کے ہاتھوں ان مکانات کا افتتاح بھی عمل میں آچکا ہے جبکہ اس اسکیم کی زبردست مانگ کے پیش نظر حکومت نے عظیم تر حیدرآباد بلدی کارپوریشن ( جی ایچ ایم سی ) کے تحت احاطہ کردہ علاقوں میں ایک لاکھ ڈبل بیڈروم فلیٹس کی تعمیر کے ساتھ ساتھ سال 2016-2017 کے دوران ریاست کے دیگر علاقوں میں مزید ایک لاکھ مکانات کی تعمیر کا حکومت نے فیصلہ کیا ہے ۔
شہر میں پینے کے پانی کی سربراہی کیلئے   1000کروڑ روپئے
مشن بھگیرتا کا تذکرہ کرتے ہوئے مسٹر ای راجندر نے کہا کہ مشن بھگیرتا کی تکمیل کے ساتھ ہی شہری علاقوں میں پینے کے پانی کی سربراہی میں کافی حد تک بہتری پیدا ہوگی ۔ حیدرآباد میٹرو واٹر ورکس کے ذریعہ آؤٹر رنگ روڈ کے ساتھ تقریباً 90 مواضعات کو پینے کا پانی فراہم کرنے کے اقدامات کئے جائیں گے ۔ حیدرآباد میٹرو کی سالانہ ادائیگیوں کی بابت200کروڑ روپئے اور حیدرآباد میٹرو واٹر کیلئے 1000کروڑ روپئے رقم فراہم کرنے کی تجویز رکھی گئی ہے ۔
3.71لاکھ کروڑ کی فاضل آمدنی‘23ہزار کروڑ روپئے مالیاتی خسارہ
تخمینہ جات موازنہ (3.718.37) کروڑ روپئے کی فاضل آمدنی اور 23,467,29کروڑ روپئے کے مالیاتی خسارہ کی نشاندہی کرتے ہیں جو جی ایس ڈی پی تخمینہ جات کا 315فیصد ہے اور یہ فاضل اعظم ترین آمدنی آبپاشی کو 25ہزار کرور روپئے کے تمام تر مجوزۃ اختصاص کے نتیجہ میں زیادہ تر سرمایہ ہے ۔ وزیر فینانس کی تقریباً ایک گھنٹہ طویل بجٹ تقریر ختم ہونے کے ساتھ ہی اسپیکر اسمبلی مسٹر مدھو سدن چاری نے اسمبلی اجلاس کو چہارشنبہ تک کیلئے ملتوی کرنے کا اعلان کیا ۔

TOPPOPULARRECENT