Sunday , April 23 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ جے اے سی سے بیروزگار نوجوانوں کی ریالی غیرضروری

تلنگانہ جے اے سی سے بیروزگار نوجوانوں کی ریالی غیرضروری

حکومت مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات عمل میں لارہی ہے، کے پربھاکر ایم ایل سی کا بیان
حیدرآباد۔/18فبروری، ( سیاست نیوز) تلنگانہ راشٹرا سمیتی نے 22 فبروری کو تلنگانہ جے اے سی کی جانب سے بیروزگار نوجوانوں کی ریالی کے انعقاد کو غیر ضروری قرار دیا اور کہا کہ تلنگانہ حکومت نے سرکاری مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات کا عمل بڑے پیمانے پر شروع کیا ہے۔ لہذا اس طرح کی ریالی کی کوئی ضرورت نہیں۔ پارٹی کے رکن قانون ساز کونسل کے پربھاکر نے میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ حکومت مخلوعہ جائیدادوں پر مرحلہ وار انداز میں تقررات کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مختلف محکمہ جات میں گذشتہ دو برسوں کے دوران بھاری تقررات کئے گئے اور تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ 7ہزار سے زائد اساتذہ کے تقررات کیلئے جلد ہی اعلامیہ جاری کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے ابھی تک 32ہزار جائیدادوں پر تقرات کئے ہیں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ جے اے سی کے صدرنشین کودنڈا رام بیروزگارنوجوانوں کو مشتعل کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ پربھاکر نے کہا کہ کودنڈا رام یہ جانتے ہوئے بھی کہ ٹی آر ایس حکومت نوجوانوں سے کئے گئے وعدوں کی تکمیل میں سنجیدہ ہے، وہ بیروزگار نوجوانوں کی ریالی کے نام پر اپوزیشن کو فائدہ پہنچانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کودنڈا رام کے عزائم بھی سیاسی دکھائی دے رہے ہیں۔ پربھاکر نے الزام عائد کیا کہ جے اے سی صدرنشین دراصل کانگریس کے ایجنٹ کے طور پر کام کررہے ہیں اور ان کے اشاروں پر کانگریس پارٹی کام کررہی ہے۔ عوام نے کانگریس اور تلگودیشم کو مسترد کردیا تھا لیکن جے اے سی صدرنشین انہیں دوبارہ مضبوط کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عوام کو اب جے اے سی صدرنشین پر اعتماد باقی نہیں رہا۔ اس کے برخلاف حکومت پر عوام کا بھرپور اعتماد ہے۔ اپوزیشن جماعتوںکی جانب سے چلائی جارہی مہم اور الزام تراشی پر عوام کو ہرگز بھروسہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کے ترجمان کی طرح ریاست میں گھوم کر حکومت کے خلاف الزام تراشی کرنے والے کودنڈا رام کو عوام سبق سکھائیں گے۔ انہوں نے نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ جے اے سی کے بہکاوے میں ہرگز نہ آئیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس نے انتخابات سے قبل عوام سے جو وعدے کئے تھے ان میں 90فیصد پر عمل آوری کی گئی ہے۔ انتخابی وعدوں کے علاوہ حکومت نے کئی نئی اسکیمات کا آغاز کیا ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT