Thursday , August 17 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ حج کیمپ کا اختتام آخری قافلہ بھی روانہ

تلنگانہ حج کیمپ کا اختتام آخری قافلہ بھی روانہ

ایک ہفتہ میں 16 فلائٹس سے جملہ 5452 عازمین مکہ معظمہ پہونچ گئے
حیدرآباد۔/8ستمبر، ( سیاست نیوز) حج 2015کیلئے تلنگانہ حج کمیٹی کے حج کیمپ کا آج اختتام عمل میں آیا اور آخری قافلہ کو ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے حج ہاوز نامپلی سے وداع کیا۔ حیدرآباد سے تلنگانہ، آندھرا پردیش اور کرناٹک کے جملہ 5452 عازمین حج ایر انڈیا کی خصوصی پروازوں کے ذریعہ سعودی عرب روانہ ہوئے۔ 2 ستمبر کو طیاروں کی روانگی کا آغاز ہوا تھا اور ایک ہفتہ میں 16فلائیٹس روانہ ہوئیں۔ لمحہ آخر میں ویٹنگ لسٹ کے منظورہ 16عازمین کو آج شام کی ریگولر فلائیٹ سے روانہ کیا گیا۔ اس قافلہ کو ڈپٹی چیف منسٹر نے وداع کیا اور ان سے تلنگانہ ریاست کی ترقی اور خوشحالی کیلئے دعا کی اپیل کی ۔ بعد میں میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے حج کیمپ کے کامیاب انعقاد پر اسپیشل آفیسر پروفیسر ایس اے شکور اور دیگر اقلیتی بہبود کے عہدیداروں کو مبارکباد پیش کی۔ انہوں نے حج ہاوز کی عمارت میں گنجائش کی کمی کے باوجود بیک وقت 2000سے زائد عازمین کے قیام و طعام کے انتظامات پر خوشنودی کا اظہار کیا۔ انہوں نے اعلان کیا کہ حکومت حج کیمپ کے انعقاد کیلئے کوئی ایک عمارت مکمل طور پر حج کمیٹی کے حوالے کردے گی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حج ہاوز کی عمارت عازمین حج کے قیام کے نظریہ کے بجائے کمرشیل مقاصد کے تحت تعمیر کی گئی جس میں عازمین حج کے قیام کی گنجائش نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ بہت جلد عہدیداروں کے ساتھ اجلاس طلب کرتے ہوئے موجودہ عمارت یا پھر متصل زیرتعمیر کامپلکس کی عمارت کو حج کمیٹی کے حوالے کرنے کا فیصلہ کیا جائے گا تاکہ حج کیمپ کسی دشواری کے بغیر منعقد کیا جاسکے۔ محمد محمود علی نے کہا کہ وہ ایام حج کے بعد سعودی عرب کے دورہ کا منصوبہ رکھتے ہیں تاکہ حیدرآباد میں سعودی کونسلیٹ کے قیام اور آئندہ سال رباط میں 1000 عازمین کے قیام کے انتظامات کو یقینی بنایا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ دو تین برسوں میں تلنگانہ کے تمام عازمین کیلئے قیام و طعام کی مفت سہولت فراہم کرنے کی کوشش کی جارہی ہے اور حکومت سعودی عرب سے نمائندگی کرتے ہوئے منہدم کی گئی 11حیدرآبادی رباطوں کی بحالی کی کوشش کی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ منہدم کی گئی رباط کے بجائے سعودی حکام سے مساوی اراضی یا پھر عمارت کے حصول کی کوشش کی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ حیدرآباد میں سعودی کونسلیٹ کے قیام سے  عازمین حج کی روانگی میں مزید سہولت پیدا ہوگی اور ساتھ ہی ساتھ حکومت آئندہ سال تلنگانہ کیلئے حج کوٹہ میں اضافہ کی مساعی کرے گی۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت شمس آباد انٹرنیشنل ایرپورٹ کے قریب حج ہاوز کی عمارت کی تعمیر کا منصوبہ رکھتی تھی تاہم بعض گوشوں سے اعتراضات کے بعد اس تجویز سے دستبرداری اختیار کرلی گئی۔ ایک سوال کے جواب میں ڈپٹی چیف منسٹر نے بتایا کہ ایر پورٹ کے قریب نئی مسجد کی تعمیر کیلئے نمائندگی کی جائے گی کیونکہ گزشتہ ایک عرصہ سے وہاں کھلے آسمان کے نیچے نماز ادا کی جارہی ہے اور بہت کم مواقع پر جی ایم آر کی جانب سے ٹینٹ کا انتظام کیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے عازمین حج کیلئے بہتر سے بہتر انتظامات کی ہدایت دی تھی اور جاریہ سال انتظامات ملک کی دیگر ریاستوں سے بہتر رہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل کے بعد دوسری مرتبہ حج کیمپ منعقد ہوا ہے جس میں آندھرا پردیش اور کرناٹک کے عازمین کیلئے بھی خدمات فراہم کی گئیں۔ انہوں نے حج کیمپ کے کامیاب انعقاد پر اقلیتی بہبود کے عہدیداروں کے علاوہ دیگر سرکاری محکمہ جات کے تعاون پر اظہار تشکر کیا۔ انہوں نے ناظر رباط کی بھی ستائش کی جنہوں نے رباط کے علاوہ مزید دو عمارتیں کرایہ پر حاصل کرتے ہوئے عازمین حج کے قیام کو یقینی بنایا۔ اسپیشل آفیسر حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور نے بتایا کہ تلنگانہ کے 2963، آندھرا پردیش کے 1819 اور کرناٹک کے 654 عازمین حیدرآباد سے روانہ ہوئے ہیں۔ ایر انڈیا کے شیڈول فلائیٹ سے16 عازمین کو سعودی عرب روانہ کیا گیا۔ حجاج کرام کی واپسی کا آغاز 14اکٹوبر سے ہوگا۔ اس موقع پر سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل، ڈائرکٹر اقلیتی بہبود جلال الدین اکبر، منیجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن بی شفیع اللہ اور دوسرے موجود تھے۔ قبل ازیں رات 2بجے عازمین حج کے 16ویں قافلے کو سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل نے حج ہاوز سے وداع کیا۔

TOPPOPULARRECENT