Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ ریاست کے مفادات نظر انداز : پونم پربھاکر

تلنگانہ ریاست کے مفادات نظر انداز : پونم پربھاکر

چیف منسٹر کی سی بی آئی تحقیقات پر بات چیت کرنے کا الزام ، سابق کانگریس ایم پی کا بیان
حیدرآباد ۔ 28 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز): کانگریس کے سابق رکن پارلیمنٹ مسٹر پونم پربھاکر نے چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ پر ریاست کے مفادات کو نظر انداز کرتے ہوئے اپنے خلاف جاری سی بی آئی تحقیقات پر مرکزی حکومت سے بات کرنے کا اعلان کیا ہے ۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پونم پربھاکر نے کہا کہ دہلی پہونچ کر کے چندر شیکھر راؤ نے مرکزی حکومت سے صرف قرض طلب کیا ہے ۔ یہاں تک کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے کے سی آر کو ملاقات کا وقت بھی نہیں دیا ہے ۔ سی بی آئی نے حیدرآباد پہونچ کر کے سی آر سے پوچھ تاچھ کی تھی ۔ جس پر چیف منسٹر تلنگانہ فوری دہلی پہونچ کر مرکزی حکومت کے ذمہ داروں سے ملاقات کی اور سی بی آئی تحقیقات پر بات چیت کی ہے ۔ مسٹر پونم پربھاکر نے کہا کہ تلنگانہ میں کسانوں کے علاوہ سماج کے تمام طبقات پریشان ہیں ۔ زرعی شعبہ بحرانی کا شکار ہے ۔ ان مسائل پر مرکزی حکومت کو کوئی توجہ نہیں دلائی گئی اور نہ ہی جن مرکزی وزراء چیف منسٹر سے ملاقات کی ہے انہوں نے تلنگانہ کے لیے کچھ دینے کا وعدہ کیا ہے ۔ انہوں نے چیف منسٹر سے مطالبہ کیا کہ مرکزی حکومت سے تلنگانہ کو کیا حاصل ہورہا ہے وہ اس کی عوام سے وضاحت کریں ۔ تقسیم ریاست بل میں تلنگانہ کو 4000 میگاواٹ برقی پراجکٹ کے ساتھ قاضی پیٹ میں ریلوے کوچ فیکٹری قائم کرنے کا وعدہ کرنے کے علاوہ پسماندہ علاقوں کی ترقی کے لیے خصوصی پیاکیج دینے کا اعلان کیا گیا تھا ۔ کے سی آر نے ان مسائل پر مرکزی حکومت سے کوئی تبادلہ خیال نہیں کیا ۔ چیف منسٹر کا دورہ دہلی صرف اپنے شخصی اور ذاتی مفادات پر مشتمل تھا اس کا ریاست تلنگانہ کے مفادات سے کوئی تعلق نہیں تھا ۔۔

TOPPOPULARRECENT