Monday , June 26 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ سے 17 خادم الحجاج کی روانگی

تلنگانہ سے 17 خادم الحجاج کی روانگی

خادم الحجاج کے لیے بعض رعایتوں کا اعلان ، درخواستیں طلب
حیدرآباد ۔ 9۔ مئی (سیاست نیوز) حج 2017 ء کیلئے تلنگانہ سے 17 خادم الحجاج روانہ ہوں گے جس کیلئے سنٹرل حج کمیٹی نے درخواست طلب کی ہیں۔ جاریہ سال خادم الحجاج کیلئے شرائط میں بعض رعایتوں کا اعلان کیا گیا جس کے باعث بڑی تعداد میں درخواستیں داخل کئے جانے کا امکان ہے ۔ سنٹرل حج کمیٹی نے آج خادم الحجاج کے انتخاب کے سلسلہ میں اعلامیہ جاری کردیا ۔ سابق میں خادم الحجاج کے لئے کم از کم ایک مرتبہ حج کرنا لازمی تھا لیکن اب صرف عمرہ کرنے والے فرد کو بھی درخواست دینے کا اہل قرار دیا گیا ہے ۔ اس کے علاوہ عمر کی حد جو گزشتہ سال 50 برس تھی ، اسے بڑھاکر 58 سال کردیا گیا ہے ۔ جاریہ سال سے حج انتظامات وزارت خارجہ کے بجائے وزارت اقلیتی امور کے ذریعہ انجام پا رہے ہیں۔ لہذا خادم الحجاج کی اہلیت کی شرائط میں رعایت دی گئی ۔ اسپیشل آفیسر تلنگانہ حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور نے بتایا کہ خادم الحجاج کیلئے 7 جون درخواستیں داخل کرنے کی آخری تاریخ ہوگی۔ یکم جولائی 2017 ء کو امیدوار کی عمر 58 سال ہونی چاہئے ۔ حج یا عمرہ کی سعادت حاصل کرنے والے افراد درخواستیں داخل کرنے کے اہل ہیں ۔ تاہم سرکاری ملازم اور وہ بھی مستقل ملازم ہونا ضروری ہے۔ خانگی اور نیم سرکاری اداروں کے ملازمین کو خادم الحجاج کے طور پر قبول نہیں کیا جائے گا ۔ پروفیسر ایس اے شکور نے بتایا کہ درخواست گزاروں کو عربی زبان پر کسی حد تک عبور ہونا چاہئے ۔ ایسے امیدواروں کو ترجیح دی جائے گی۔ ہر 200 عازمین کیلئے ایک خادم الحجاج کے اعتبار سے تلنگانہ میں 17 خادم الحجاج کا انتخاب کیا جائے گا۔ گزشتہ سال قرعہ اندازی کے ذریعہ انتخاب عمل میں آیا تھا ۔ تاہم اس مرتبہ طریقہ کار کو قطعیت دینا باقی ہے۔ امکان ہے کہ امیدواروں کے انٹرویوز لئے جائیں گے۔ درخواست فارم سنٹرل حج کمیٹی یا تلنگانہ حج کمیٹی کے ویب سائیٹ سے ڈاؤن لوڈ کئے جاسکتے ہیں۔ خانہ پری کے بعد معہ دستاویزات درخواستوں کو تلنگانہ حج کمیٹی کے دفتر واقع حج ہاؤز میں داخل کرنا ہوگا۔ انہوں نے بتایا کہ جاریہ سال عمر کی حد میں 8 سال کی رعایت دی گئی ہے ۔ اس کے علاوہ عمرہ کی ادائیگی پر خادم الحجاج کی حیثیت سے انتخاب کی اہلیت فراہم کی گئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ حج کمیٹی کے قواعد کے اعتبار سے ایک عہدیدار کو خادم الحجاج کی حیثیت سے نامزد کیا جائے گا ۔ اس کے علاوہ حج کمیٹی اور وقف بورڈ سے دو خادم الحجاج نامزد کئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ خادم الحجاج کے انتخاب کے سلسلہ میں کسی بھی سفارش کو قبول کرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ، لہذا امیدواروں کو اس سلسلہ میں درمیانی افراد کی دھوکہ دہی کا شکار نہیں ہونا چاہئے ۔ انہوں نے بتایا کہ جو بھی امیدواروں کو انتخاب کے سلسلہ میں لالچ دیتے ہوئے پائے جائیں گے ، ان کے خلاف ایف آئی آر درج کیا جائے گا ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT