Friday , September 22 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ میں بی جے پی کا برا حال

تلنگانہ میں بی جے پی کا برا حال

تلگو دیشم سے اتحاد نقصان دہ ، کیڈر میں مایوسی
حیدرآباد ۔ 16 ۔ فروری : ( سیاست نیوز) : بھارتیہ جنتا پارٹی تلنگانہ میں سیاسی اتحاد اور مفاہمت کی وجہ سے بری طرح پچھڑ گئی ۔ حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کے انتخابات میں تلگو دیشم سے انتخابی مفاہمت کی وجہ سے اس کا اس قدر برا حشر ہوا کہ بلدی حدود میں اس کے پانچ ارکان اسمبلی موجود ہونے کے باوجود حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کے لیے اس کے چار کارپوریٹرس ہی منتخب ہوسکے ۔ بی جے پی کیڈر میں مایوسی پائی جاتی ہے ۔ پارٹی کے رکن قانون ساز کونسل این اوم چندر راؤ کا کہنا ہے کہ پارٹی کے کئی افراد کا یہ تاثر ہے کہ تلگو دیشم پارٹی سے انتخابی اتحاد بی جے پی کو بہت مہنگا پڑا ۔ بی جے پی میں اب یہ احساس پروان چڑھ رہا ہے کہ تلگو دیشم سے اتحاد رکھتے ہوئے پارٹی تلنگانہ میں طاقت بن کر نہیں ابھر سکتی ۔ بی جے پی کی زیر قیادت این ڈی اے میں تلگو دیشم شامل ہے اور تلگو دیشم مرکز کی این ڈی اے حکومت میں شامل ہے ۔ بی جے پی انتخابی اتحاد سے متعلق ہائی کمان کے فیصلہ کی پابند ہے ۔ بی جے پی نے علحدہ تلنگانہ کاز کی تائید کی تھی ۔ اس کے باوجود محض تلگو دیشم سے اتحاد برقرار رکھنے کی وجہ سے رائے دہندے اسے انتخابات میں مسترد کررہے ہیں ۔ میونسپل کارپوریشن حیدرآباد کے حالیہ انتخابی نتائج اس کی تازہ مثال ہیں ۔ چیف منسٹر اور صدر ٹی آر ایس کے چندر شیکھر راؤ کے حالیہ دورہ دہلی کے بعد یہ قیاس آرائیاں زوروں پر ہیں کہ کے سی آر نے وینکیا نائیڈو کو تلنگانہ سے راجیہ سبھا کی سیٹ کا پیشکش کیا ہے ۔ مرکزی وزیر شہری ترقی وینکیا نائیڈو کی راجیہ سبھا کے رکن کی حیثیت سے موجودہ میعاد جون میں ختم ہورہی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT