Wednesday , September 20 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ میں بی جے پی کو اقتدار پر لانے ہرممکنہ کوشش

تلنگانہ میں بی جے پی کو اقتدار پر لانے ہرممکنہ کوشش

آسام کی طرح تلنگانہ نتائج بھی پارٹی کے حق میں ہوں گے ، حکمراں ٹی آر ایس کا متبادل بنانے کی کوشش
حیدرآباد /17 جون ( پی ٹی آئی ) بی جے پی آئندہ انتخابات میں تلنگانہ میں آسام اسمبلی کے نتائج کا عکس ثابت کرے گی ۔ تلنگانہ میں بی جے پی کو اقتدار پر لانے کی ہر ممکنہ کوشش کی جارہی ہے ۔ ریاستی پارٹی صدر کے لکشمن نے کہا کہ تلنگانہ میں حکمراں پارٹی ٹی آر ایس کے متبادل کے طور پر بی جے پی کو مضبوط بنایا جارہا ہے ۔ انہوں نے اس بات کو مسترد کردیا کہ تلنگانہ راشٹرا سمیتی کے بعض گوشے بی جے پی کی جانب جھکاؤ رکھتے ہیں تاکہ وہ بی جے پی میں شامل ہو سکے اور مرکز میں این ڈی اے حکومت میں بھی ٹی آر ایس کی شمولیت کے امکان کو انہوں نے مسترد کردیا۔ لکشمن نے یہاں پر اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ بی جے پی کے قائدین آسام کے نتائج سے حوصلہ پاکر ریاست میں بی جے پی کو اقتدار دلانے کی کوشش کر رہے ہیں ۔ بی جے پی کے اس وقت تلنگانہ میں صرف پانچ ارکان اسمبلی ہیں ۔ اب یہ پانچ ارکان اسمبلی تلنگانہ اسمبلی کے اندر بھاری اکثریت سے کامیاب ہوں گے ۔ ہریانہ میں بھی بی جے پی کے صرف چار ارکان اسمبلی تھے ۔ اب وہاں پر 43 حلقوں پر کامیاب ہوئی ہے اور اقتدار حاصل کیا۔ لہذا تلنگانہ میں بھی یہی ہوگا ۔ تلنگانہ میں اس وقت بی جے پی کے پانچ ارکان اسمبلی اور ایک ایم ایل سی ہے ۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ ٹی آر ایس اپنے انتخابی وعدوں پر عمل نہیں کر رہی ہے ۔ غریبوں کو ڈبل بیڈروم کے مکانات دینے کی اسکیم بھی پوری نہیں کی گئی ۔ ایک لاکھ سرکاری ملازمتوں میں تقررات کا وعدہ بھی پورا نہیں کیا گیا ۔ کے جی تا پی جی مفت تعلیم کا بھی وعدہ ادھورا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی آنے والے دنوں میں عوام سے رجوع ہوکر ٹی آر ایس حکومت کی مبینہ ناکامیوں کو آشکار کرے گی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اصل اپوزیشن پارٹیاں کانگریس اور تلگودیشم کمزور ہوچکی ہیں ۔ ان کے ارکان اسمبلی پارٹیاں چھوڑکر ٹی آر ایس میں شامل ہوچکے ہیں ۔ اب بی جے پی کیلئے سنہرہ موقع ہے کہ وہ تلنگانہ میں خود کو مضبوط بنائے ۔ آنے والے دنوں میں بی جے پی اپنا اقتدار حاصل کرے گی اور تلگودیشم اور کانگریس کا مستقبل تاریکی میں گم ہوجائے گا ۔مرکز این ڈی اے حکومت کی کارکردگی سے عوام خوش ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT