Monday , August 21 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ وقف بورڈ کی آج سے کرایہ وصولی مہم

تلنگانہ وقف بورڈ کی آج سے کرایہ وصولی مہم

نبی خانہ مولوی اکبر اور مکہ مدینہ علاء الدین وقف پتھر گٹی کے کرایہ داروں سے ربط
حیدرآباد ۔ 18۔ جولائی (سیاست نیوز) تلنگانہ وقف بورڈ نے اوقافی جائیدادوں کے کرایہ جات کی وصولی کیلئے کل 19 جولائی سے باقاعدہ مہم شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ صدرنشین وقف بورڈ محمد سلیم نے بتایا کہ چیف اگزیکیٹیو آفیسر ایم اے منان فاروقی کی نگرانی میں خصوصی ٹیمیں کل نبی خانہ مولوی اکبر اور مکہ مدینہ علاء الدین وقف پتھر گٹی کے کرایہ داروں سے ملاقات کرتے ہوئے بقایہ جات کے ساتھ کرایہ ادا کرنے کیلئے ترغیب دیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ خصوصی ٹیمیں پولیس کی اعانت سے یہ کام انجام دیں گی۔ انہوں نے بتایا کہ کئی کرایہ دار ماہانہ 300 تا 500 روپئے کرایہ ادا کر رہے ہیں جبکہ اس علاقہ میں مارکٹ ویلیو ہزاروں میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اوقافی جائیدادوں کے کرایوں کی عدم ادائیگی کے ذریعہ دراصل وقف بورڈ کو نقصان پہنچایا جارہا ہے اور بورڈ فلاحی کام انجام دینے سے قاصر ہے۔ انہوں نے کہا کہ کرایہ داروں کو وقف بورڈ سے تعاون کرنا چاہئے تاکہ منشائے وقف کے مطابق آمدنی کو مسلمانوں کی فلاح و بہبود پر خرچ کیاجاسکے۔ اسی دوران صدرنشین وقف بورلا نے آج نبی خانہ مولوی اکبر کے کرایہ داروں کو حج ہاؤز طلب کرتے ہوئے بات چیت کی۔ انہوں نے کرایہ داروں پر زور دیا کہ وہ بقایہ جات کے ساتھ اضافی کرایہ ادا کرے۔ محمد سلیم نے پیشکش کیا کہ اگر کرایہ دار پابندی کے ساتھ ادائیگی کیلئے راضی ہوجائیں تو مارکٹ ویلیو سے کم کرایہ مقرر کیا جائے گا ۔ انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ وقف بورڈ کی ملگیات سے ہزاروں لاکھوں روپئے کی آمدنی حاصل کی جارہی ہے لیکن کرایہ ادا کرنے کیلئے تیار نہیں۔ اگر یہی کوئی خانگی جائیداد ہوتی تو کرایہ دار مارکٹ کے اعتبار سے ہر ماہ پابندی سے کرایہ ادا کرتے۔ انہوں نے بتایا کہ کرایہ جات کی وصولی کی مہم میں تعاون کیلئے متعلقہ پولیس سے خواہش کی گئی ہے۔ محمد سلیم کے مطابق اسمبلی کی کمیٹی نے بھی اوقافی جائیدادوں کے کرایہ میں اضافہ کی سفارش کی ہے ۔ اس کمیٹی نے نبی خانہ مولوی اکبر کا دورہ کیا تھا ۔ اسی دوران چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ منان فاروقی نے بتایا کہ شہر کے علاوہ اضلاع میں بھی اوقافی جائیدادوں کے کرایہ جات وصول کرنے کیلئے خصوصی ٹیمیں روانہ کی جائیںگی ۔انہوں نے کہا کہ مختلف تنازعات کے سبب اہم اداروں سے وقف بورڈ کو آمدنی حاصل نہیں ہورہی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT